اعظم سواتی کیس: عدالت کا ڈپٹی سیکٹری جنرل کو سیکڑی داخلا سے ہدایت لینے کا حکم

201

اسلام آباد ہائی کورٹ نے اعظم سواتی کے خلاف درج مقدمات پر ڈپٹی اٹارنی جنرل کو سیکرٹری داخلہ سے ہدایات لینے کا حکم دے دیا۔

منگل کوپی ٹی آئی کے سینیٹر اعظم سواتی کی مقدمات کے خلاف دائر درخواست پر اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس عامر فاروق نے سماعت کی۔اعظم سواتی کے وکیل بابر اعوان عدالت کے سامنے پیش ہوئے اور دلائل دیتے ہوئے کہا کہ اعظم سواتی اس وقت جسمانی ریمانڈ پر ہیں، ملک بھر میں ان کے خلاف 50 مقدمات درج ہو چکے ہیں۔ 

وکیل بابر اعوان نے کہا کہ درخواست ہے سیکرٹری داخلہ کے ذریعے اعظم سواتی کے خلاف ملک بھر میں درج مقدمات کی تفصیل منگوائیں۔انہوں نے کہا کہ جب تک میرے موکل خلاف تمام مقدمات کی تفصیلات نہیں آ جاتیں تب تک کسی کے حوالے نہ کیا جائے۔

وکیل بابر اعوان نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ اعظم سواتی کے خلاف زیادہ تر مقدمات سندھ اور بلوچستان میں درج کئے گئے ہیں۔عدالت نے وکیل سے استفسار کیا کہ سیکرٹری داخلہ کا کنٹرول صوبائی آئی جیز پر کیسے ہوتا ہے؟ ۔

وکیل بابر اعوان نے کہا کہ آئی جیز پر سیکرٹری داخلہ کا کنٹرول ہوتا ہے۔عدالت نے ڈپٹی اٹارنی جنرل کو سیکرٹری داخلہ سے ہدایات لینے کا حکم دے دیا۔اسلام آباد ہائی کورٹ نے کہا کہ چیک کر کے بتائیں سیکرٹری داخلہ کا کنٹرول اس طرح ہے جس طرح بتایا جا رہا ہے؟۔اسلام آباد ہائی کورٹ نے کیس کی مزید سماعت جمعہ تک ملتوی کردی۔