فلسطینی وزیراعظم کا یورپ سے اسرائیلی وزرا کے بائیکاٹ کا مطالبہ

154
فلسطینی وزیراعظم کا یورپ سے اسرائیلی وزرا کے بائیکاٹ کا مطالبہ

مقبوضہ بیت المقدس:فلسطینی وزیر اعظم محمد اشتیہ نے اسرائیلی حکومت کو فلسطینی عوام کے خلاف “جنگ کی حکومت” قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ فلسطین نے یورپی یونین کے ممالک سے کہا کہ وہ اس حکومت میں شامل متعدد نئے وزرا کا بائیکاٹ کریں۔

کیونکہ اسرائیل کی نئی حکومت میں شامل ہونیوالے فلسطینیوں کے خلاف جرائم میں ملوث ہیں۔اشتیہ نے اخبارکے ساتھ ایک انٹرویو میں کہا کہ فلسطین “انٹرنیشنل کریمنل کورٹ اور انٹرنیشنل کورٹ آف جسٹس میں یہودی بستیوں، قتل و غارت اور قابض ریاست کے تسلط پر اسرائیل کا پیچھا جاری رکھے گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ حالیہ اسرائیلی کنیسٹ کے انتخابات کے نتائج نے ظاہر کیا کہ اسرائیل میں امن کے لیے کوئی شراکت دار نہیں ہے۔ اسرائیلی حکومتی جماعتیں امن عمل کے بارے میں ایک موقف رکھتی ہیں۔اشتیہ نے اسرائیلی حکومت پر الزام لگایا کہ وہ دو ریاستی حل کو تباہ کرنے کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے ہے۔

فلسطینی ریاست کے امکان کو ختم کرنے کے لیے منظم طریقے سے کام کیا جا رہا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ تل ابیب کو “اس سے سب سے زیادہ نقصان ہوگا۔فلسطینی وزیر اعظم اشتیہ نے اشارہ کیا کہ دو ریاستی حل کا متبادل “ایک ریاست ہو گی جس میں فلسطینیوں کی تعداد یہودیوں کی تعداد سے زیادہ ہو گی۔

آج فلسطینیوں کی تعداد 350,000 ہے جو یہودیوں کی تعداد سے زیادہ ہے۔اشتیہ نے اس بات پر زور دیا کہ فلسطین اب بھی عرب اقدام کے مطابق دو ریاستی حل کے آپشن پر یقین رکھتا ہے۔ یہ حل “سیاسی سطح پر اب بھی ممکن ہے۔

اشتیہ نے زور دے کر کہا کہ دو ریاستی حل جو ان کے بقول عرب ممالک اور یورپ چاہتے ہیں کا مطلب 67 کی سرحدوں پر واپسی اور پناہ گزینوں کی واپسی ہے۔اشتیہ نے دنیا سے مطالبہ کیا کہ وہ “بین الاقوامی کوارٹیٹ کی موت” کے بعد ایک نئے بین الاقوامی اقدام کی ضرورت کی طرف بڑھیں۔

انہوں نے غرب اردن کے اسرائیل سے الحاق کی صہیونی سازشوں کو ناکام کرانے پر زور دیا۔انہوں نے مزید کہا کہ امریکی صدر جو بائیڈن نے فلسطینیوں کے ساتھ کئی وعدے کیے، جیسے کہ یروشلم میں فلسطینیوں کے لیے امریکی قونصل خانہ دوبارہ کھولنا، یکطرفہ اسرائیلی اقدامات کو روکنے کے لیے کام کرنا، دو ریاستی حل کی بنیاد پر مذاکرات کو دوبارہ شروع کرنا اورفلسطینی پناہ گزینوں کی کے ادارے اونروا کی مالی مدد بحال کرنا جیسے وعدے شامل تھے۔ امرکا نے اپنے وعدے پورے نہیں کیے۔