وعدہ معاف گواہ بنا تھا نہ کبھی بنوں گا، فیصل واوڈا

114

تحریک انصاف کے سابق رہنما فیصل واوڈا نے کہا ہے کہ عمران خان کے ارد گرد سازشی کیڑے پھر رہے ہیں۔ نہ میں وعدہ معاف گواہ بنا تھا نہ کبھی بنوں گا۔ عمران خان اپنے لوگوں پر بے جا بھروسا کرتے ہیں۔

اختیارات کے ناجائز استعمال اور برطانیہ سے فنڈز خورد برد کے معاملے پر نیب کی تحقیقاتی ٹیم کے سامنے پیشی کے بعد میڈیا نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے فیصل واوڈا نے کہا کہ لندن سے فنڈز آئے تھے، اس پر مجھے بلایا گیا۔  اس سارے معاملے پر کابینہ میں، میں نے اور شیریں مزاری نے سوال اٹھائے تھے۔  میرے خیال میں فواد نے بھی سوال کیا تھا ۔  اس معاملے پر بیرسٹر شہزاد اکبر نے بریفنگ دی تھی۔

نجی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق انہوں نے کہا کہ  ایک ملک کے سر پر رکھ کر یہ سائن کروایا گیا۔  مجھے پوچھیں کہ اعظم خان پیسے کے لین دین میں شامل ہے کہ نہیں۔ یہ غلط کام بلاوجہ کابینہ سے کروایا گیا تھا۔  میرااور شہزاد اکبر کا جھگڑا ہوا تھا۔  پاکستان کے خزانے کو 190 ملین پاؤنڈز کا نقصان ہوا۔ عمران خان کو شہزاد اکبر کے بارے میں کہا تھا کہ یہ باہر چلا جائے گا۔

فیصل واوڈا کا کہنا تھا کہ آئی بی بھی اس وقت وہی رپورٹ کرتی تھی جو شہزاد اکبر کہتے تھے ۔ جب ارشد شریف کا قتل ہوا تو جھوٹی کہانی سامنے آئی، میں نے تب بھی کہا تھا کہ یہ پلان کیا گیا ہے، پاکستان میں پلان ہوا۔ عمران خان کو اللہ نے عزت دی ہے۔ عمران خان کے ساتھ لوگوں کی محبت ہے ۔ پی ڈی ایم کے ساتھ لوگوں کی نفرت ہے۔ اس مارچ سے کس کو فائدہ پہنچے گا ؟۔ کون یہ مقاصد حاصل کروانا چاہ رہا ہے؟۔

عمران خان کے لانگ مارچ سے متعلق بات کرتے ہوئے فیصل واوڈا نے کہا کہ جب آپ کی شہرت اتنی ہے کہ آپ دو تہائی اکثریت سے انتخابات میں کامیاب ہو سکتے ہیں تو ایسی صورت حال میں مارچ کی کیا ضرورت ہے۔ فوادچودھری کو ایک جھوٹ کے پیچھے کئی جھوٹ بولنے کی ضرورت نہیں ہے۔ میرا سیاسی سفر تحریک انصاف کے ساتھ شروع ہوا تھا اور تحریک انصاف کے ساتھ ہی ختم ہو گا۔

فیصل واوڈا نے کہا کہ جنرل فیصل ایک غریت مند افسر ہے۔ میں نے عمران خان کو براہ راست معاملات ڈیل کرنے کا کہا ۔ میں نے عمران خان سے کہا کہ جنرل فیصل سے ملاقات کروا دیتا ہوں ۔ جنرل فیصل نے کہا کہ میرے باس ملک میں نہیں، ان کی اجازت کے بعد عمران خان سے ملاقات کروں گا ۔ جب میں نے عمران خان کو یہ بات بتائی تو دو خاص لوگوں نے میرے خلاف پروپیگنڈا کیا۔