یورپ میں ہیٹ ویو، رواں صدی کے آخر تک سالانہ 90 ہزار ہلاکتوں کا خدشہ

210

برسلز: یورپ کے ماحولیاتی ادارے یورپین انوائرمنٹ ایجنسی نے کہا ہے کہ اگر کوئی اقدامات نہ کیے گئے تو تو گرمی کی لہریں یا ہیٹ ویوز صدی کے آخر تک ہر سال یورپ کے 90 ہزار شہریوں کی موت کا باعث بن سکتی ہیں۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق موافق اقدامات کے بغیر، اور سنہ 2100 تک 3 ڈگری سیلسیس گلوبل وارمنگ کے منظر نامے کو دیکھتے ہوئے 90 ہزار یورپی سالانہ شدید گرمی سے مر سکتے ہیں۔انوائرمنٹ ایجنسی کے تخمینے کے مطابق اگر 3 ڈگری سینٹی گریڈ کے بجائے 1.5 ڈگری سیلسیس کی گلوبل وارمنگ ہو تو یہ اموات سالانہ 30 ہزار تک کم ہو جاتی ہیں۔

ترقی یافتہ ممالک نے گلوبل وارمنگ کو صنعتی دور سے پہلے کی سطح یعنی 1.5 ڈگری سیلسیس تک رکھنے کا عہد کیا ہے انشورنس کمپنیوں کے اعداد و شمار کے مطابق سنہ 1980 سے سنہ 2020 کے درمیان تقریبا ایک لاکھ 29 ہزار یورپی باشندے گرمی کی شدت سے ہلاک ہوئے۔