سیلاب کے نقصانات اور اقدامات

271

ماہرین کے مطابق آئندہ تین سال میں سیلاب موسمیاتی تبدیلی کی وجہ سے مزید شدت کے ساتھ آتے رہیں گے۔ دنیا کے مختلف ممالک میں پاکستان سے زیادہ شدت کے ساتھ سیلاب آئے کچھ ممالک کے نتائج پاکستان جیسے ہی ہیں لیکن کئی ممالک کی اچھی منصوبہ بندی کی وجہ سے نقصانات میں کافی حد تک کمی آئی بلکہ کچھ ممالک ایسے بھی ہیں جہاں پانی کو ذخیرہ کرکے فوائد میں تبدیل کیا گیا۔ کسی بھی ملک کا معاشرہ اور معیشت سیلاب کے بعد جانوں، پودوں، املاک اور بنیادی ڈھانچے کے نقصان کے بعد بہت سے طریقوں سے متاثر ہوتا ہے، جس کا مطلب ہے کہ وہاں مزدوروں کی تعداد کم ہوگی، مقامی لوگوں کے لیے زراعت، برآمدات اور کاروبار کم ہوں گے۔ بڑے پیمانے پر نقل مکانی ہوگی، جن میں سے بہت سے لوگ بے گھر اور بے روزگار ہوسکتے ہیں۔ اس خلا کو پر کرنے کے لیے حکومت کو اعلیٰ سطح پر خرچ کرنا پڑے گا۔ ملک کو اپنے بنیادی ڈھانچے کو دوبارہ تعمیر کرنے کے لیے خوراک اور مواد کی فراہمی کے لیے بین الاقوامی امداد کی تلاش کرنی پڑ سکتی ہے۔ جب کہ کچھ ممالک رضاکارانہ طور پر مدد کریں گے، دوسرے اپنی کوششوں کا معاوضہ لیں گے، جس سے امداد یافتہ ملک کو قرض اور معاشی نقصان ہو گا۔
سیلاب املاک کو نقصان پہنچاتا ہے۔ اور انسانوں اور دیگر تمام جانداروں کی زندگیوں کو خطرے میں ڈالتا ہے۔ کیونکہ سیلاب سب سے زیادہ بار بار آنے والی قدرتی آفات میں سے ہے جو زیادہ معاشی نقصان اور مشکلات کا باعث بنتے ہیں۔ قدرتی آفات (خشک سالی کو چھوڑ کر) سے ہونے والے نقصانات کا تقریباً 90 فی صد سیلاب اور اس سے منسلک پانی کے بہاؤ کی وجہ سے ہوتا ہے۔ طوفانوں اور سمندری طوفانوں کے مقابلے میں تقریباً دوگنا لوگوں کی موت کا ذمے دار سیلاب ہے۔ حالیہ دہائیوں میں سیلاب کے سماجی اور معاشی اخراجات میں اضافہ ہوا ہے اور اگر کوئی اقدام نہ کیا گیا تو یہ رجحان بڑھتا ہی جائے گا۔ 2017 تک، پانی سے متعلق قدرتی آفات سے دنیا بھر میں 306 بلین امریکی ڈالر کا نقصان ہوا۔ 1980 اور 2016 کے درمیان، 90 فی صد قدرتی آفات آب و ہوا سے متعلق تھیں۔ 2016 میں، 31 فی صد عالمی نقصان طوفانوں کی وجہ سے ہوا، 32 فی صد سیلاب اور 10 فی صد شدید درجہ حرارت کی وجہ سے ہوا۔ اس کے علاوہ، اس بات کا امکان موجود ہے کہ بعض خطوں میں سمندر کی سطح میں اضافے اور شدید بارشوں کے نتیجے میں موسمیاتی تبدیلی سیلاب میں اضافہ کر سکتی ہے۔
سیلاب بہت سے عوامل کی وجہ سے ہو سکتا ہے جیسے کہ تیز بارش، پانی پر تیز ہوائیں، غیر معمولی اونچی لہریں، سونامی یا ڈیموں کی ناکامی، تالاب کی سطح کا بلند ہونا وغیرہ۔ کئی دریاؤں میں وقفے وقفے سے طغیانی آتی ہے، جس سے ارد گرد کا علاقہ متاثر ہوتا ہے۔ بارش یا برف باری کے دوران، کچھ پانی تالابوں یا مٹی میں برقرار رہتا ہے، باقی گھاس اور پودوں کے ذریعے جذب ہو جاتے ہیں، کچھ بخارات بن جاتا ہے اور باقی زمین کے اوپر ہی رہتا ہے۔ سیلاب اس وقت آتا ہے جب جھیلیں، دریا کے کنارے، مٹی اور نباتات سارا پانی جذب نہیں کر پاتے۔ اس کے بعد پانی ایسی مقدار میں زمین سے نکل جاتا ہے جسے نہروں کے نالیوں میں منتقل نہیں کیا جا سکتا یا قدرتی تالابوں، جھیلوں اور انسانوں کے بنائے ہوئے
ذخائر میں نہیں رکھا جا سکتا۔
سیلابی پانی اس وقت خطرناک ہو سکتا ہے جب ان میں زیادہ گہرائی اور رفتار ہو، سیلابی پانی میں چلنا یا گاڑی چلانا بہت خطرناک ہوتا ہے جب وہ چھے انچ کا پانی ہو جو غیر مستحکم قدموں کا سبب بن سکتا ہے، اور دو فٹ پانی گاڑی کو بہا سکتا ہے۔ سیلاب میں زیادہ لوگ اپنی گاڑیوں میں ڈوبتے ہیں، سیلاب اور طوفان بھی بجلی کی تاریں گرا سکتے ہیں اور بجلی کے کرنٹ پانی میں سے گزر سکتے ہیں۔
سیلاب کے فوری برے اثرات کے باوجود اس کے بہت سے فوائد ہیں، کسانوں اور زرعی شعبے سے وابستہ لوگوں کے لیے، یہ مٹی کو غذائی اجزاء فراہم کرکے ان کی مدد کرتا ہے، جس کی کمی تھی، یہ زمین کو زیادہ زرخیز بناتا ہے اور زرعی پیداوار میں اضافہ کرتا ہے۔ دریاؤں اور جھیلوں میں غذائی اجزاء بھی شامل کیے جاتے ہیں، وہ مچھلیوں کی صحت کو بہتر بناتے ہیں۔ سیلاب سے ماحولیاتی نظام بہتر ہو سکتا ہے، سیلابی میدان نسبتاً ہموار زمینیں ہیں جو پانی سے ملحق ہوتی ہیں جیسے کہ ندی یا ندی جو چینل کی گنجائش سے زیادہ ہونے پر سیلابی پانی میں ڈوب جاتی ہے اور دریا کے آس پاس کے سیلابی میدان کو زرعی زمین کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے۔
سیلاب کے خطرے کو کم کرنے کے لیے کون سے اقدامات کرنے ہوں گے کیونکہ پاکستان میں سیلاب اگلے برسوں میں بھی متوقع ہیں۔ سیلاب کے خطرے کے انتظام کی حکمت عملیوں کی پانچ اقسام ہیں: 1۔ سیلاب کے خطرے سے بچاؤ کی روک تھام کے اقدامات کا مقصد لوگوں ؍جائداد وغیرہ کی تباہی کو کم کر کے سیلاب کے نقصانات کو کم کرنا ہے، حکمت عملی کی بنیادی توجہ صرف سیلاب زدہ علاقوں سے باہر تعمیر کے ذریعے ’’لوگوں کو پانی سے دور رکھنے‘‘ پر ہے۔ 2۔ سیلاب سے بچاؤ کے اقدامات کا مقصد بنیادی ڈھانچے کے کاموں کے ذریعے سیلابی علاقوں کے امکان کو کم کرنا ہے، جیسے کہ ڈیموں اور ویرز، جنہیں زیادہ تر ’’فلڈ ڈیفنس‘‘ یا ’’ساختی اقدامات‘‘ کہا جاتا ہے۔ اصل توجہ ’’پانی کو لوگوں سے دور رکھنے‘‘ پر ہے۔ 3۔ سیلاب کے خطرے کی تخفیف کمزور علاقے کے اندر اقدامات کے ذریعے سیلاب کے نتائج کو کم کرنے پر مرکوز ہے۔ سیلاب زدہ علاقے کے اسمارٹ ڈیزائن کے ذریعے نتائج
کو کم کیا جا سکتا ہے۔ اقدامات میں مقامی ترتیب، محفوظ علاقے کے اندر پانی کی برقراری، یا (قواعد) فلڈ پروف عمارت شامل ہیں۔ اس طرح سیلاب کے خطرے سے بچنے کے لیے تمام اقدامات کے ساتھ ساتھ سیلاب زدہ علاقے میں یا اس کے نیچے پانی کو برقرار رکھنے یا ذخیرہ کرنے کے اقدامات شامل ہیں۔ 4۔ سیلاب کے نتائج کو سیلاب سے نبٹنے کی تیاری کر کے بھی کم کیا جا سکتا ہے۔ اقدامات میں سیلاب کی وارننگ سسٹم، ڈیزاسٹر مینجمنٹ اور انخلا کے منصوبے تیار کرنا اور سیلاب آنے پر اس کا انتظام شامل ہیں۔ افسوس کی بات یہ ہے پاکستان میں محکمہ موسمیات نے مئی میں سیلاب کی وارننگ دی تھی جس کی کوئی تیاری نہیں کی گئی، سیلاب آنے کے بعد خیموں کے ٹینڈر دیے گئے، 5۔ سیلاب کی بحالی یہ حکمت عملی سیلاب کے بعد اچھی اور تیز بحالی میں سہولت فراہم کرتی ہے۔ 6۔ پاکستان میں اموات کی بڑی وجہ یہ ہے کہ دریاؤں کے سوکھ جانے سے لوگوں نے دریا کے اندر اور ارد گرد گھر تعمیر کیے ہمارے انتظامی اداروں نے کوئی کارروائی نہیں کی جس وجہ سے اموات اور نقصانات میں اضافہ ہوا۔ 7۔ سیلاب کے نقصانات کو کم کرنے کے لیے ڈیموں کی تعمیر کے ساتھ ندی، نالے، نہروں کی صفائی اور نئی نہروں کی تعمیر ہے جس سے سیلاب کا رخ تبدیل کرکے ان علاقوں کی طرف منتقل کرنا ہے جہاں نقصانات ہونے کے مواقع کم ہوتے ہیں۔