سندھ کے سیلاب متاثرین کیلئے ڈبلیو ایچ او نے ادویات، کٹس فراہم کردیں

217
provided medicines

کراچی: سیلاب متاثرین کے لیے عالمی ادارہ صحت کی جانب سے محکمہ صحت سندھ کو ادویات، کٹس اور دیگر ضروری اشیا فراہم کردی گئیں۔

کراچی میں آئی آئی ڈیپو میں عالمی ادارہ صحت کے پاکستان کے نمائندے پالیتا اور وزیر صحت سندھ ڈاکٹر عذرا پیچوہو نے مشترکہ پریس کانفرنس کی۔سربراہ عالمی ادارہ صحت پاکستان ڈاکٹر پالیتا نے کہا کہ سندھ میں تباہی سب سے زیادہ ہوئی ہے کچھ چیزوں پر ہمیں کام کرنے کی ضرورت ہے۔

وزیر صحت سندھ  نے بتایا کہ عالمی ادارہ صحت کی جانب سے ادویات، گاڑیاں، کشتیاں فراہم کی جارہی ہیں، میڈیکل کیمپس لگائے جارہے ہیں، لوگوں تک پہنچنا ضروری ہے۔

سربراہ عالمی ادارہ صحت پاکستان ڈاکٹر پالیتا نے کہا کہ پاکستان کو اس وقت شدید قدرتی آفت کا سامنا ہے، ہم صحت کے مراکز، طبی آلات سمیت دیگر چیزیں فراہم کر رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ملیریا، ڈینگی اور ڈائریا کی وبا پھیلی ہوئی ہے غذائی قلت کا بھی سامنا ہے، ہم نے غذائی قلت کے خاتمے کے لیے اسکریننگ کا فیصلہ کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ بچوں میں غذائی قلت کے خاتمے کے لیے ہم کام کر رہے ہیں، سیلاب زدہ علاقوں میں نفسیاتی مسائل کے حل کے لیے بھی کام کر رہے ہیں، آج ہم 20 ہزار خواتین کے لیے کٹس فراہم کر رہے ہیں۔اس موقع پر صوبائی وزیر نے ایک سوال کے جواب میں بتایا کہ دواؤں کی قیمتوں میں اضافے سے متعلق تمام فیصلے وفاق دیکھتی ہے، ڈریپ نے فارما کمپنیوں کو دواوں کی قیمتوں میں اضافے سے صاف انکار کر دیا ہے۔وزیر اعلی سندھ کی تبدیلی سے متعلق صوبائی وزیر نے بتایا کہ تمام خبریں بے بنیاد اور افواہ ہیں۔وزیرِ صحت سندھ نے کہا کہ نجی ادارے ڈینگی کا ڈیٹا فراہم نہیں کر رہے، سندھ ہیلتھ کیئر کمیشن کو احکامات دیے ہیں کہ جو لیب ڈیٹا فراہم نہیں کرے گی اس کو بند کردیا جائیگا۔