پاک بھارت وزرائے اعظم ملاقات کاکوئی پلان نہیں، بلاول بھٹو

186

تاشقند: وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری نے واضح کیا ہے کہ ستمبرمیں پاک بھارت وزرائے اعظم ملاقات کاکوئی پلان نہیں،بلاول بھٹو زرداری نے تاشقند میں شنگھائی تعاون تنظیم کی وزرائے خارجہ کونسل اجلاس سے خطاب کیا اور اجلاس کی سائیڈلائنز پر روسی وزیرخارجہ سے بھی بات چیت کی،

اس موقع پر بلاول بھٹو نے کہا کہ بھارت ہماراپڑوسی ملک ہے،آپ بہت سی چیزوں کا انتخاب کرسکتے ہیں مگر پڑوسی کا نہیں، ہمیں اپنے پڑوسی کےساتھ رہنے کی عادت ڈالنی چاہیے،انہوں نے کہا کہ اگست 2019کے بعد بھارت کے ساتھ تعمیری بات چیت مشکل ہوئی اور بھارتی سیاستدانوں کے اسلاموفوبیا پر مبنی بیانات بات چیت کو مشکل بنارہے ہیں،

بلاول بھٹو نے کہاکہ پاکستان اوربھارت دونوں ایس سی اوکاحصہ ہیں، دونوں ممالک صرف ایس سی اوکی وسیع البنیاد سرگرمیوں کے تناظرمیں انگیج ہیں تاہم بھارت کےساتھ کسی دوطرفہ ملاقات کاپلان نہیں،انہوں نے کہا کہ اپنے لوگوں کے لیے اقتصادی مواقع تلاش کرنےکی کوشش کررہے ہیں،امریکا سمیت تمام ممالک کے ساتھ معاشی تعلقات کے فروغ کے لیے کام کررہے ہیں،

وزیر خارجہ بلاول بھٹو نے خارجہ پالیسی سے متعلق سابق وزیراعظم عمران خان کے دعوے مسترد کرتے ہوئے کہا کہ عمران خان حکومت میں تھے تو انہوں نے امریکا سے تعلقات بنانے کی کوشش کی،

عمران خان تعلقات بہتر بنانے میں ناکام رہے تو اس میں ہمارا کیا قصور ہے،صحافی کے سوال پر بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ عمران خان کے دعووں میں کوئی صداقت نہیں ہے، اپنے لوگوں کے لیے اقتصادی مواقع تلاش کرنے کی کوشش کر رہے ہیں، امریکا سمیت تمام ممالک کے ساتھ معاشی تعلقات کے فروغ کے لیے کام کر رہے ہیں۔