قومی زرعی تحقیقاتی مرکز میں “شہد کی مکھیوں کا عالمی دن” کا انعقاد 

120

اسلام آباد: شہد کی مکھی صرف شہد ہی پیدا نہیں کرتی ، اس کا صدیوں سے زرعی شعبے خصوصا غذائی فصلوں کی افزائش میں اہم کردار رہا ہے۔ان مکھیوں کی وجہ سے ایک پودے سے دوسرے پودے میں پولن یعنی زردانے کی منتقلی ہوتی ہے اگر یہ منتقلی نہ ہو تو نہ پھول کھلیں اور نہ ہی پھل اور سبزیاں پیدا ہوں۔مکھیوں کی اہمیت کو اجاگر کرنے کے لئے ہر سال دنیا بھر میں شہد کی مکھیوں کا عالمی دن منایا جاتا ہے ، اس سلسلے میں قومی زرعی تحقیقاتی مرکز اسلام آباد میں “شہد کی مکھیوں کے عالمی دن ” کے حوالے سے ایک تقریب کا اہتمام کیا گیا۔

تقریب کے مہمان خصوصی ڈاکٹر غلام محمد علی چیئر مین پاکستان زرعی تحقیقاتی کونسل چیئرمین پی اے آرسی ڈاکٹر غلام محمد علی نے کہا کہ شہد کی مکھیوں کے پالنے کی صنعت کے لیے تحقیق پر مبنی حل پی اے آرسی کا بنیادی کام ہے اور اس سلسلے میں انہوں نے قومی زرعی تحقیقاتی مرکز میں قائم ہنی بی ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کو واضح طور پر کچھ رہنما خطوط جاری کیے ہیں تاکہ مستقبل میں ہر پھول کے شہد کے طبی ٹریلز پر تحقیق کی جا سکے۔ چیئرمین پی اے آرسی نے یہ بھی بتایا کہ پی اے آرسی کی کوششوں سے پاکستان اب شہد برآمد کرنے والا ملک ہے اور ملک سے تقریباً 10 ملین امریکی ڈالر مالیت کا شہد برآمد کیا جا رہا ہے۔

ڈاکٹر راشد محمود ڈائریکٹر ایچ بی آر آئی، این اے آر سی/نیشنل کوآرڈینیٹر ہنی بیز نے شہد کی مکھیوں کے دن اور ہماری زندگی میں شہد کی مکھیوں کی اہمیت کے ساتھ ساتھ ملک میں شہد کی مکھیوں کے پالنے کے موجودہ منظر نامے کے بارے میں بتایا۔آئی سی موڈ پاکستان کے کنٹری نمائندے جناب محمد اسماعیل نے بھی تقریب سے خطاب کیا اور انہوں نے ملک میں شہد کی مکھیوں کو بچانے کے لیے HBRI کے ساتھ مشترکہ تجویز تیار کرنے کی خواہش بھی ظاہر کی۔ممبرقدرتی وسائل ڈاکٹر شاہد مقصود گل نے بھی حاضرین سے خطاب کیا اور شہد کی مکھیوں کی اہمیت اور ماحول میں ان کے کردار پر اپنے قیمتی تبصرے سے آگاہ کیا۔ انہوں نے ملک میں شہد کی مکھیوں کے تحفظ اور بچانے کے لیے مرکوز حکمت عملی پر زور دیا۔

کچھ شہد کی مکھیاں پالنے والوں نے ملک میں شہد کی مکھیوں کے پالنے کو درپیش موجودہ چیلنجز اور مسائل کے بارے میں بھی بات کی۔ حسن ابدال کے ترقی پسند شہد کی مکھیوں کے پالنے والے جناب آفتاب احمد نے مختصر طور پر حاضرین سے خطاب کیا اور بتایا کہ شہد کی مکھیوں کو کیڑے مار ادویات اور موسمیاتی تبدیلیوں کے مسائل کا سامنا کیسے کرنا ہے۔ جنگلات کی کٹائی سے ملک میں شہد کی مکھیوں کو بہت زیادہ نقصان ہو رہا ہے۔ ملک میں مکھیوں کے پودوں کو چڑھانے کی اشد ضرورت ہے۔

ایک مقامی شہد کی مکھیاں پالنے والے اور شہد کی مکھیاں پالنے کے آلات بیچنے والے مسٹر عبداللہ چوہدری نے بتایا کہ کس طرح قومی زرعی تحقیقاتی مرکز نے انہیں شہد کی مکھیوں کے پالنے کا کاروبار شروع کرنے میں مدد کی۔تقریب کے آخر میں شہد کی مکھیوں کو بچانے کے لئے آگاہی کے طور پر ایک مختر واک کا بھی اہتمام کیا گیا۔