سرکاری گندم کوٹہ بند، آٹے کے بحران کاخدشہ

388

لاہور:سرکاری گندم کوٹہ بند ہونے سے اوپن مارکیٹ میں مہنگی گندم اور کم دستیابی کی وجہ سے آٹے کا شدید بحران پیدا ہوسکتا ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق  فلور ملز نے قیمتوں میں ممکنہ کمی کے سبب گندم کی خریداری اور آٹے کی پسائی کم کردی ہے اور رسد اور طلب میں فرق بڑھنے کی صورت میں آٹا بحران پیدا ہونے کا خدشہ پیدا ہوگیا ہے۔

تاہم حکومتی ذرائع کا دعویٰ ہے کہ گندم کی وافر مقدار موجود ہے بہت جلد نئی پالیسی کا اعلان ہوگا، اور آٹا بحران نہیں آئے گا۔ سرکاری گندم کوٹہ بند ہونے، اوپن مارکیٹ میں مہنگی گندم اور کم دستیابی کی وجہ سے آٹے کا شدید بحران پیدا ہوسکتا ہے۔

 پنجاب میں آٹاکی قیمتوں میں 1300 روپے تک اضافہ کے باوجود دستیابی مستحکم نہیں ہو پارہی، حکومت کی جانب سے گندم اور آٹا کی قیمتوں میں ممکنہ کمی کے پیش نظر فلورملز نے گندم خریداری کم کردی ہے۔

 حکومت نے فلور ملز کو قبل از وقت سرکاری گندم کی فراہمی شروع کرنے پر حتمی مشاورت شروع کردی، فلورملز کو جون کی بجائے رواں ماہ ہی سرکاری گندم کی فراہمی شروع کئے جانے کا امکان ہے۔

 وزیر اعظم نے اوپن مارکیٹ کی آٹا قیمتوں میں 200 سے لے کر300 روپے فی تھلاہور:سرکاری گندم کوٹہ بند ہونے سے اوپن مارکیٹ میں مہنگی گندم اور کم دستیابی کی وجہ سے آٹے کا شدید بحران پیدا ہوسکتا ہے۔یلا کم کرنے کا اصولی فیصلہ کر لیا جس کے تحت حکومت نے 20کلو آٹا تھیلا کی قیمت 1ہزار روپے سے لے کر1100 روپے کے درمیان مقرر کرنے پر غور شروع کردیا ۔ حکومت عوام کو سستا آٹا کی فراہمی کیلئے فی 20 کلو تھیلا پر600 روپے سے زائد سبسڈی برداشت کرے گی۔

 حکومت نے ملک میں گندم ذخائر کو مستحکم کرنے کیلئے گندم امپورٹ پر بھی مشاورت شروع کردی، دوسری جانب محکمہ خوراک پنجاب نے اب تک 41 لاکھ ٹن گندم خرید کرلی اور 50 لاکھ ٹن ہدف کی تکمیل کیلئے ذخیرہ اندوزوں کے خلاف کریک ڈاﺅن شروع کردیا گیا۔