سندھ ہائیکورٹ: سپرہائی وے کراچی پرٹرکوں اور تجاوزات کیخلاف کارروائی کا حکم

191

سندھ ہائیکورٹ نے سپرہائی وے ایم نائن کے دونوں اطراف تجاوزات اور ریتی بجری کے ٹرکوں کے خلاف درخواست پر ڈپٹی کمشنر کو تجاوزات کیخلاف کارروائی کا حکم دیدیا۔ پیر کوہائیکورٹ میں سپرہائی وے ایم نائن کے دونوں اطراف تجاوزات اور ریتی بجری کے ٹرکوں کیخلاف درخواست کی سماعت ہوئی۔ سندھ انوائرمینٹل پروٹیکشن ایجنسی، کمشنر رپورٹ نے جواب عدالت میں جمع کرادیا۔ناظر سندھ ہائیکورٹ کی جانب سے رپورٹ بھی عدالت میں پیش کردی گئی۔ کمشنر کی رپورٹ میں کہا گیا کہ سروس روڈ پر بڑے پیمانے پر ریتی بجری بھری پڑی ہے۔ سروس روڈز کے دونوں اطراف ڈمپرز اور ٹرک کھڑے ہوئے ہیں۔سیپا نے اپنی رپورٹ میں کہا کہ گرین بیلٹ پر سرگرمیاں سیپا قوانین کی خلاف ورزی ہے۔ ریتی بجری کی وجہ سے علاقے میں ہوا آلودہ ہورہی ہے۔ کھلے طریقے سے ریتی بجری رکھنے سے ماحول مزید آلودہ ہورہا ہے اور پھیپھڑوں سمیت متعدد بیماریاں پیدا ہو رہی ہیں۔ ریتی بجری اس طرح رکھنا وہاں مکینوں کے لئے خطرناک ہے۔ عدالت نے سیپا کی رپورٹ کو ریکارڈ کا حصہ بنا لیا۔ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل سندھ نے ناظر رپورٹ پر جواب کے لیے مہلت طلب کرلی۔ عدالت نے ڈپٹی کمشنر کو تجاوزات کیخلاف کارروائی کا حکم دیدیا۔عدالت نے ہدایت کی غیر قانونی طور پر رکھی گئی ریتی بجری اور دیگر تجاوزات کا خاتمہ کیا جائے۔ عدالت نے ڈیڑھ ماہ میں رپورٹ طلب کرتے ہوئے سماعت ملتوی کردی۔ سپر ہائی وے کے دونوں اطراف تجاوزات کیخلاف عبدالستار و دیگر کی جانب سے دائر کی گئی تھی۔