رعشے کامرض قابل علاج ہے، ڈاکٹرفوزیہ صدیقی

75

کراچی (اسٹاف رپورٹر )ملک کی معروف نیورولوجسٹ اور مرگی کے مرض کی ماہر ڈاکٹر فوزیہ صدیقی نے کہا ہے کہ Parkinson’s Disease جسے عام طور پر رعشہ کا مرض کہا جاتا ہے عموماََ 50 سال کی عمر کے بعد لاحق ہوتا ہے۔اس مرض میں ہاتھوں کا لرزنا اور کانپنا ، جسم کا سست پڑ جانا اور جسم کی حرکت میں کمزوری اور سستی کا آجانا، آگے کی طرف گرنا اور چلنے میں لڑکھڑاہٹ کا ہوجانا ہے۔ یہ مرض آہستہ آہستہ بڑھتا جاتا ہے مگر یہ قابل علاج ہے۔ اگر اس مرض کو بروقت تشخیص کرلیا جائے تو ہمارے بزرگ بہت اچھی زندگی گزار سکتے ہیں۔ رعشہ کے مرض کا صحیح اور باقاعدہ علاج کیا جائے تو اکڑے ہوئے، کمزور اور بستر پر پڑے ہوئے بزرگ چلنے پھرنے کے قابل بن سکتے ہیں اور محتاجی کی زندگی گزارنے سے بچ سکتے ہیں۔ وہ ’Parkinson’s Disease ‘‘ پر منعقدہ ورکشاپ میں شریک نیورولوجسٹ، ماہرنفسیات اورڈاکٹرز سے خطاب کررہی تھیں۔