ریاست کا لاپتا ضمیر

300

مورخہ 26 نومبر 2021 راولپنڈی میں لاہور ہائی کورٹ راولپنڈی بنچ میں معزز جسٹس راجا شاہد محمود عباسی کی عدالت میں آئین پاکستان 1973 کے آرٹیکل 199 کے تحت دائر درخواست کی سماعت ہوئی جس میں سینئر پولیس افسر آر پی او کو طلب کیا گیا اور کہا گیا کہ حراست میں لیے گئے لاپتا بھائی زاہد امین اور صادق امین کو پیش کریں۔ پولیس افسر کو واضح اشارہ دیا گیا کہ بھائیوں کو پیش ہونا ہے اور عدالت شہریوں کی جبری گمشدگیوں پر کوئی سمجھوتا نہیں کرے گی۔ 2 دسمبر 2021 تک ایک ہفتہ اگلی سماعت کے لیے دیا گیا تھا۔ بدقسمتی سے پولیس کے اعلیٰ افسران بھی حراست میں لیے گئے بھائیوں کا سراغ لگانے میں ناکام رہے۔ اس سے قبل، 4 نومبر 2021 کو ہونے والی سماعت میں، لیفٹیننٹ جنرل ہلال حسین، سیکرٹری دفاع کو رپورٹ دینے کے لیے کہا گیا تھا، اس عبوری رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ؛’’جبری گمشدہ افراد یعنی زاہد امین اور صادق امین ولد بادشاہ خان نہ تو ایجنسیوں کی تحویل میں ہیں اور نہ ہی ان کی قید کی جگہ کے بارے میں کوئی معلومات ہیں‘‘۔
پولیس نے بھی دونوں بھائیوں کی گمشدگی میں ملوث ہونے سے انکار کیا ہے اور اب تک سی پی او اور آر پی او سطح کے پولیس افسران لاپتا ہونے والے بھائیوں کا سراغ نہیں لگا سکے۔ دو انتہائی اہم محکموں نے جبری گمشدگی کی خبروں کی تردید کی ہے، توشہری کہاں گئے، کیا ہوا میں تحلیل ہو گئے! درخواست گزار زاہد امین اور صادق امین کے حقیقی بھائی اور والدہ ہیں، خان بادشاہ کے دونوں بیٹے کنسٹرکشن کا کاروبار کرتے تھے، اڈیالہ روڈ راولپنڈی کے رہائشی ہیں۔ دونوں بھائیوں کو پولیس کی وردی میں ملبوس اہلکاروں نے الگ الگ حراست میں لے لیا اور آج تک غیر قانونی اور غیر آئینی طریقے سے حراست میں رکھا گیا۔ درخواست گزار نے غیر قانونی اور غیر آئینی جبری گمشدگی کے خلاف فوری پٹیشن دائر کی ہے جس میں معزز عدالت سے آرٹیکل 199 کے تحت لاپتا افراد کو پیش کرنے کا مطالبہ کیا گیا۔
10 مارچ 2021 کو دوسرے بھائی صادق کے گھر سے اغوا کے بعد بادشاہ خان کے دو بیٹوں کا یہ کیس 16 مارچ 2021 کو عدالت میں داخل کیا گیا تھا۔ بڑے بھائی زاہد کو 7 سال قبل 7 نومبر 2014 کو اسی طرح گھر سے لے جایا گیا تھا۔ گزشتہ 9 ماہ سے کیس کی جارحانہ کارروائی جاری ہے لیکن کوئی فائدہ نہیں ہوا۔ واضح ثبوت، جبری گمشدگیوں کے واضح کیس اور واقعے کی سی سی ٹی وی فوٹیج کے باوجود، پولیس اور وزارت دفاع جبری گمشدہ افراد کی معلومات دینے میں ناکام رہے ہیں۔ یہ جبری گمشدہ افراد اور ان کے اہل خانہ کے بنیادی انسانی حقوق کی صریح خلاف ورزی ہے۔ 9 ماہ کی طویل عدالتی کارروائی کے دوران کئی بار پولیس پر دباؤ ڈالا گیا اور اس کے اعلیٰ افسران جیسے سی پی او اور آر پی او کو طلب کیا گیا جنہوں نے ہمیشہ گمشدگیوں میں اپنے ملوث ہونے سے انکار کیا۔ دوسری جانب کئی مواقع پر پولیس نے تصدیق کی ہے کہ دونوں بھائیوں کے پروفائل میں کوئی قابل اعتراض بات نہیں ہے۔ 2 دسمبر کو بھی زاہد اور صادق کی سماعت خاموشی سے گزر گئی، نہ تو آر پی او صاحب پیش ہوئے اور نا ہی جج صاحب نے دباؤ ڈالا۔ اسی بنچ نے راولپنڈی کے ایک غریب رہائشی جو پھل فروش تھا اور لاپتا ہونے والے علی حیدر کے کیس کی بھی سماعت کی اور پولیس کو 10 دن سے کم وقت میں لاپتا افراد کو عدالت میں پیش کرنے کا دوبارہ وقت دیا گیا۔ اس سے قبل ایک اور لاپتا رکشہ ڈرائیور بخت شاہ زیب کا کیس بھی لاہور ہائی کورٹ راولپنڈی بینچ میں زیر سماعت تھا جس میں کوئی پیش رفت نظر نہیں آئی۔ جج کی جانب سے پولیس کو 9 دسمبر 2021 کو لاپتا فرد کو عدالت میں پیش کرنے کا آخری موقع دیتے ہوئے سخت ریمارکس دیے۔ معزز جج نے کہا کہ اگر پولیس اس بار ناکام ہوئی تو نتائج بھگتنے کے لیے تیار رہے۔
کچھ دن پہلے 30 نومبر کو جب اسلام آباد ہائی کورٹ میں مدثر نارو کے کیس کی سماعت ہو رہی تھی تو معزز چیف جسٹس نے وزیر انسانی حقوق سے ذاتی طور پر لاپتا شہریوں کے بارے میں پوچھا۔ محترمہ شیریں مزاری نے کہا کہ قانون بنایا جا رہا ہے، قومی اسمبلی سے پاس ہو چکا ہے اور جلد ہی سینیٹ سے بھی منظور کرایا جائے گا، جس کے بعد جبری گمشدگی قابل سزا جرم ہو گا تو یہ مسئلہ ختم ہو جائے گا۔ نارو کی والدہ راحت کا کہنا ہے کہ جب بھی ہم عدالت میں جاتے ہیں تو قانون کے بارے میں بتایا جاتا ہے آ خر اس قانون سے میرے بیٹے نارو کی بازیابی میں کیا مدد ملے گی؟ معزز عدالت نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ لاپتا افراد کے خاندانوں کی مالی کفالت ملک کے چیف ایگزیکٹو پر ذاتی طور پرعائد ہونی چاہیے کیونکہ یہ ریاست کی ذمے داری ہے۔ عدلیہ سے راحت کی امیدیں ختم ہونے لگیں کیونکہ وہ اپنے بیٹے کو ڈھونڈنے کے لیے عدالت آئیں تھیں نہ کہ وزیر اعظم سے ملاقات اور کسی قانون کو پاس کروانے کے لیے۔ لاپتا افراد کے اہل خانہ کے بارے میں قانون کیا کہتا ہے یہ ایک اور بحث ہے۔ یہاں صرف ایک شق 514 کا ذکر کرنے سے اندازہ ہو جائے گا کہ لاپتا افراد کے معاملے پر کتنی سنجیدگی سے غور کیا گیا ہے۔
بل کا نام ہے؛ ’’فوجداری ترمیمی بل 2021‘‘ شق 514 درج ذیل ہے:
’’جبری گمشدگی کے سلسلے میں جو کوئی شکایت درج کرائے یا ایسی معلومات فراہم کرے جو جھوٹی ثابت ہوں اسے یا کسی دوسرے شخص کو جبری، زبردستی یا غیر ارادی طور پر گمشدہ کیا گیا ہے، یا اس سلسلے میں کوئی کوشش کی گئی ہے، وہ ایسے جرم کا مرتکب ہو گا جس کی سزا پانچ سال قید اور ایک لاکھ روپے تک جرمانہ ہو گی‘‘۔
جبری گمشدگی ایک ایسا جرم ہے جسے ثابت کرنا سب سے مشکل ہے، زمین پر اہل خانہ اسے کیسے ثابت کریں گے۔ جب کسی ملک کے ہزاروں خاندان کیمپوں میں اپنے لاپتا پیاروں کے لیے روتے ہیں اور احتجاجی مظاہرے کرتے ہیں تو جبری گمشدگی کے وسیع پیمانے پر وجود سے انکار نہیں کیا جا سکتا۔ مزید برآں، کمیشن آف انکوائری میں جبری گمشدگیوں کے 8000 سے زائد کیسز رجسٹرڈ ہیں اور قبائلی علاقوں میں 3000 سے زائد افراد زیر حراست مراکز میں ہیں کیا یہ ثبوت کافی ہیں؟ انسانی آزادی، آزادی اور بنیادی حقوق کے ایسے معاملات پر عدالتوں کا ادراک قابل تعریف ہے، تاہم اصل مجرموں پر کس حد تک دباؤ ڈالا جاتا ہے، یہ اب بھی ایک تشویشناک سوال ہے۔ سیکڑوں شہری؛ ’’انسانی زندگیاں‘‘ خوف، غم اور بے یقینی کے عالم میں زندگی گزار رہی ہیں، اپنے لاپتا پیاروں کے بارے میں سچ سننے کے لیے ہر سماعت پر امیدیں باندھ رہی ہیں۔ انہیں اب سچ، انصاف، بندش اور معاوضے کی ضرورت ہے! جو ان کا حق ہے۔ اگر عدلیہ پولیس کو آسان اہداف کی طرف متوجہ کرے گی تو خدشہ ہے کہ متاثرین اور لاپتا افراد کے لواحقین کو طویل عرصے تک انصاف فراہم نہیں کیا جائے گا۔ عوام ہی نہیں ریاست کا ضمیر بھی غائب نظر آتا ہے۔
’’ناانصافی کہیں بھی ہو وہ انصاف کے لیے خطرہ ہے‘‘ مارٹن لوتھر کنگ