لوکل گورنمنٹ ترمیمی بل آئین سے متصادم ہے، ظہیر جتوئی

63

سانگھڑ (نمائندہ جسارت) امیر جماعت اسلامی سانگھڑ ظہیر الدین جتوئی نے کہا ہے کہ سندھ لوکل گورنمنٹ ترمیمی بل 2021 آئین سے متصادم اور بلدیاتی اداروں کو مالی اور انتظامی طور پر بے اختیار کرنے کا بل ہے۔ جماعت اسلامی اس عوام دشمن کالے قانون کو مسترد کرتی ہے۔ سندھ لوکل گورنمنٹ ترمیمی بل واپس لے کر بلدیاتی اداروں کو مالی وانتظامی طور پر بااختیار بنایا جائے۔ سندھ حکومت کے اس کالے قانون،آئین شکن اور عوام دشمن فیصلے کے خلاف جماعت اسلامی بھرپور تحریک چلائے گی ۔ظہیر الدین جتوئی نے کہا کہ آئین کی شق نمبر140-A میں واضح کہا گیا ہے کہ لوکل گورنمنٹ بنانے کا مقصد منتخب نمائندوں کو سیاسی،انتظامی اور مالی اختیارات منتقل کرنا ہے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے امیر صوبہ محمد حسین محنتی صاحب کی اپیل پر جماعت اسلامی میرپورخاص کے تحت سانگھڑ پریس کلب کے سامنے میرپورخاص چوک پربڑے عوامی احتجاجی مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ مظاہرے سے رشید احمد راجپوت حزب اللہ جتوئی نے بھی خطاب کیا، عوام اور کارکنان کی بڑی تعداد شریک تھی جو سندھ حکومت کی غیر آئینی قانون سازی کے خلاف شدید نعرے لگا رہے تھے ۔ترقی یافتہ ممالک میں ملک کی تعمیر وترقی اورعوام کی خوشحالی کا دارو مدار بلدیاتی اداروں کی سہولیات کی بہتر انداز میں فراہمی پرمنحصر ہوتاہے، بدقسمتی سے پیپلزپارٹی کی حکومت سندھ لوکل گورنمنٹ ترمیمی بل 2021 کے ذریعے عوام کے حقوق پر ڈاکا ڈال رہی ہے،اس طرح کے قوانین سے جمہوریت کومفلوج کیا جا رہا ہے، ہم عوامی وقانونی جدوجہد جاری رکھیں گے۔