بدین: سرکاری اراضی پر قبضے کے خاتمے کیلیے آپریشن کا فیصلہ

88

 

 

بدین(نمائندہ جسارت) ڈی سی بدین آغا شاہ نواز خان کی زیرصدارت اجلاس سپریم کورٹ کے حکام پر عملدرآمد کے لیے سرکاری اراضی اور پلاٹوں پر غیرقانونی قبضہ اور تجاوزات کے خاتمہ کے لیے آپریشن کا فیصلہ۔ تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ آف پاکستان کی جانب سے سرکاری اراضی اور پلاٹوں پر قائم تجاوزات اور غیرقانونی قبضوں کے خاتمہ کے لیے جاری احکامات اور ہدایات پر عمل درآمد کے لیے ڈپٹی کمشنر بدین آغا شاہ نواز خان کی زیر صدارت منعقد ہونے والے اجلاس میں اے ڈی سی ون محمد حسن بلوچ اے ڈی سی ٹو لیاقت لونڈ اسسٹنٹ کمشنر بدین محمد یونس رند مختار کار بدین کامران برہمانی سمیت تمام محکموں کے ضلعی اور تحصیل افسران بلدیاتی اداروں کے ایڈمنسٹریٹر اور چیف افسران کے علاوہ پولیس افسران نے بھی شرکت کی اور اپنے اپنے محکموں کی سرکاری اراضی اور پلاٹوں پر تجاوزات اور قبضوں کی تفصیلات سے آگاہ کیا۔اس موقع پر ڈی سی بدین آغا شاہ نواز خان نے اجلاس میں شریک افسران کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ سرکاری اراضی اور پلاٹوں کے علاوہ نہروں سیم نالوں روڈ رستوں اور سرکاری عمارتوں کے اطراف قائم تعمیرات تجاوزات اور قبضوں کے خاتمہ کو ہر صورت یقینی بنایا جائے اور تجاوزات کے خلاف آپریشن میں کسی کے ساتھ زیادتی بھی نہ کی جائے اور کسی کو انتقامی کارروائی کا نشانہ بھی نہ بنایا جائے۔انہوں نے کہا سرکاری اراضی پر موجود فلاحی اور رفاہی ادارے جن کے پاس قانونی اجازت نامہ این او سی اور تحریری حکام کے علاوہ کرایہ دار ہیں ان کی تفصیلات سے بھی آگاہ کیا جائے۔اجلاس میں سرکاری زرعی اور محکمہ جنگلات کی اراضی پر قائم قبضوں اور تجاوزات کے خاتمہ کا بھی فیصلہ کیا گیا۔ ڈی سی بدین آغا شاہ نواز خان نے اجلاس میں موجود اینٹی انکرورچمنٹ کے افسران کو ہدایت کی کہ وہ شہری علاقوں میں نئی ہاؤسنگ اسکیمز کا جائزہ لیں ہاؤسنگ اسکیم کی منظوری اور این او سی کے مطابق شرائط پر عملدرآمد کو یقینی بنانے اور ان پر عملدرآمد کو یقینی بنانے کے اقدام کے علاوہ دیگر نجی ذاتی اور سروی زمین اور پلاٹوں پر تعمیرات کو اپنی حدود میں رہنے روڈ گلی اور نالوں پر قبضہ اور تجاوزات کو ختم کرنے کے لیے عملی اقدام اور سخت کارروائی کا حکم دیا۔اجلاس میں غیرقانونی قبضوں اور تجاوزات کے خاتمے کے آپریشن میں پولیس سے مدد لینے کا بھی فیصلہ کیا گیا۔