سی پیک کو کراچی منتقل کرنا معاشی رول بیک ہوگا، عبد الحق ہاشمی

89

کو ئٹہ(نمائندہ جسارت) امیر جماعت اسلامی بلوچستان مولانا عبدالحق ہاشمی نے کہاہے کہ سی پیک کو بلوچستان سے کراچی منتقل کیا جارہا ہے۔میرا خیال ہے کہ یہ منتقلی بھی ایک رول بیک ہے میں اس کو ملک کے لیے اکنامک رول بیک سمجھتا ہوں۔یہ منتقلی ملک کی معیشت کا بالکل بھٹا بٹھادے گی اور پوری دنیا میں اس عمل سے بدنامی کا ٹھپا بھی لگے گا۔ون بیلٹ کے نام پر دنیا کے جو ممالک اس سے جڑے تھے وہ سب اس فیصلے سے نالاں ہوں گے اور اس کی ناکامی کی ذمے دار پاکستان کی حکومت ہو گی۔مولانا عبدالحق ہاشمی نے کہا کہ چیف جسٹس کوئٹہ میں بھی ایف سی کی عام سڑکوں پر تجاوزات اور غیر قانونی بندشوں پر نوٹس لیں، ٹریفک میں تنگی اور راہ گیروں کی پریشانی میں ان تجاوزات کا بہت بڑادخل ہے۔جگہ جگہ تلاشی ،ٹریفک مسائل ،تجاوزات کی وجہ سے عام شہری پریشان ہیں ۔عدالت عظمیٰ ایف سی چیک پوسٹوں کی وجہ سے بننے والی تجاوزات کا نوٹس لیتے ہوئے شہریوں کو ان مسائل سے نجات دلائے ۔ انہوں نے کہاکہ سی پیک کا فائدہ بلوچستان کو نہ دینے کی وجہ سے اہل بلوچستان میں تشویش پائی جاتی ہے اور نوجوان احساس محرومی کا شکارہیں ۔بلوچستان کے عوام کو آئین قانونی حق نہ دینے کی وجہ سے ہر طرف سے حق دوتحریکیں اٹھیں گی ۔ کوئٹہ کراچی روڈ ڈبل کرنے کے بجائے موٹر وے طرز پرجدید شاہراہ بنائی جائے۔بلوچستان کے عوام کو کب تک لولی پاپ سے ٹرخایاجائے گا ۔ساحل وبارڈرٹریڈ کے حوالے سے اہل بلوچستان پر بلاوجہ کی سختی ٹھیک نہیں ۔حکومتی سطح پر روزگار نہیں، بے رورزگاری عام ہے، ان حالات میں ضرورت اس بات کی ہے کہ اہل بلوچستان کو بھی ہمسائیہ ممالک سے آسانی وسہولت کے ساتھ قانونی کاروبار کرنے دیاجائے ۔ حکومت لاپتا افراد کو منظر عام پرلائے ۔