پاکستانی جیولری  نے چین میں قدم جما نا شروع کر دیئے،برآمدات میں ریکارڈ  اضافہ

261

پاکستانی جیولری نے برانڈنگ اور لائیو ای کامرس کے ذریعے چین میں قدم جما نا شروع کر دیئے ، رواں سال پاکستانی قیمتی پتھروں کی چین کو  برآمدات میں ریکارڈ  اضافہ، رواں سال کی پہلی تین سہ ماہیوں میں پاکستان کی چین کو خام قیمتی پتھروں کی برآمدات    گزشتہ سال کے مقابلے 9.6 گنا زیادہ ہیں،برانڈز، ڈیزائن اور سروس کو بہتر بنا کر پاکستانی جیولری چین میں اعلی ترین مارکیٹ کا ایک حصہ لینے کی کوشش کر رہی ہے۔

چائنہ اکنامک نیٹ کے مطابق  رواں ماہ کے شروع میں، چوتھی چائنا انٹرنیشنل امپورٹ ایکسپو (CIIE)میں چینی صارفین نے  پاکستانی قیمتی پتھروں کو بہت سراہا ۔ وہ پاکستان سے شاندار ڈیزائن کردہ اعلی درجے کے زیورات سے بہت متاثر ہوئے۔ برانڈ کے مالک کے مطابق، گزشتہ سال کی سی آئی آئی ای میں حصہ لینے کے بعد ان کے اسٹور کی فروخت میں سالانہ  کی بنیاد پر 40 سے 50 فیصد اضافہ ہوا ہے، جس سے غیر ملکی کاروبار ی باری افراد  میں سی آئی آئی ای کے زبردست فروغاور اس سے بھی اہم بات یہ ہے کہچین میں  پاکستانی زیورات کی بڑھتی ہوئی پہچان کی تصدیق ہوتی ہے ۔

رواں سال پاکستانی قیمتی پتھروں کی چین کو  برآمدات میں ریکارڈ اضافہ ۔ چین پاکستان فری ٹریڈ ایگریمنٹ کے دوسرے مرحلے کے ذریعے سہولت فراہم کی گئی جس سے  پاکستان کا چین کو قیمتی پتھروں پر برآمدی ٹیرف 17سے 32فی صد کم ہو کر صفر پر آ گیا۔ 2021کی پہلی تین سہ ماہیوں میں چائنا کسٹمز کے مطابق پاکستان کی چین کو خام قیمتی پتھروں کی برآمدات 2020کی اسی مدت کے 9.6گنا زیادہمقابلے  ہیں، اس دوران چین کو ملک کی کل برآمدات 2.5بلین ڈالر تک پہنچ گئی جس میں  77فیصد سالانہ اضافہ ہوا ۔ خاص طور پر پاکستان کے قیمتی پتھروں بشمول روبی، نیلم، زمرد اور نیم قیمتی پتھروں سے چین کو تقریبا 500,000قیراط کی مجموعی برآمدات پر پہنچ گئیں ، جس سے دنیا کی سب سے بڑی منڈی میں پاکستان سے قیمتی پتھروں کی بڑھتی ہوئی مانگ کا پتہ چلتا ہے۔  چینی صارفین میں روبی اور نیلم سب سے زیادہ پسند کیا جاتا ہے۔

پاکستانی جیولر  عقیل احمد چوہدری نے سی ای  این  کو بتایا کہ چینی صارفین 1سے 3کیریٹ کے روبی اور نیلم کے شوقین  ہیں۔ روبی نے فروخت میں  سب سے زیادہ حصہ ڈالا، اس کے بعد نیلم، ہیرا اور زمرد۔ چینی مارکیٹ میں 30 سال سے زیادہ عمر کی خواتین صارفین ہمارے مرکزی کسٹمر گروپ پر مشتمل ہیں۔  ان کی پہلی پسند 1 سے 3 قیراط کا روبی یا نیلم ہے۔ جیسا کہ نیلم کو بیرون ملک خاص طور پر یورپ میں مصروفیت اور عزم کا ایک جذباتی نشان سمجھا جاتا ہے، پاکستانی جیولری برانڈ نے چینی صارفین میں اس خاص معنی کو مقبول بنانے کی کوشش کی ہے اور اچھے نتائج حاصل کیے ہیں۔ مزید برآں مزید پاکستانی زیورات اور قیمتی پتھروں کے فن پاروں کو چینیوں کے ثقافتی ذوق کو پورا کرنے کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے۔ پاکستانی زیورات چین میں برسوں سے داخل ہوئے ہیں اور مناسب قیمت ہمیشہ فروخت ہونے والے اہم نکات میں سے ایک رہی ہے۔

اب، برانڈز بنا کر اور ڈیزائن اور سروس کو بہتر بنا کر، پاکستانی جیولری چین میں اعلی ترین مارکیٹ کا ایک حصہ لینے کی کوشش کر رہی ہے۔ عقیل پہلے سے ہی شنگھائی کے سب سے مشہور شاپنگ اضلاع میں واقع ایک لگژری مال میں ایک اسٹور چلا رہا ہے، کاروبار میں اضافہ کے ساتھ عقیل کا جیولری برانڈ جلد ہی لیاننگ صوبے کے دالیان میں ایک نیا اسٹور کھولنے جا رہا ہے۔ عقیل نے کہا  پاکستانی جیولری اداروں کے لیے میری تجویز صرف خام مال کی فروخت نہیں ہے۔ ہمیں صارفین کے لیے بہترین سروس فراہم کرنی چاہیے۔ عملے کی تربیت بہت اہم ہے، جو ہمیں صارفین کے ساتھ بہتر تعامل کرنے دیتی ہے۔ مزید برآں، ہمیں نئی مصنوعات کو ڈیزائن اور تیار کرنے کے لیے صنعت کے مروجہ فیشن کے رجحان کو سمجھنے کی ضرورت ہے۔

سپلائی، ڈیزائن سے لے کر مارکیٹنگ تک کے انتظام کے لیے ایک منفرد برانڈ قائم کیا جانا چاہیے ۔ جیسا کہ مشاہدہ کیا گیا ہے، چینی مارکیٹ میں پاکستانی قیمتی پتھر کی مصنوعات کی ایک بڑی تعداد شاندار نظر آتی ہے لیکن بغیر سرٹیفیکیشن کے، جو انہیں زیادہ پہچان حاصل کرنے میں رکاوٹ ہے۔ جیولری اپریزر شانگ ینینکے بانی چانگ کائشیانگ نے سی ای این کو بتایا کہ اگر پاکستانی قیمتی پتھر چینی مارکیٹ میں قدم جمانا چاہتے ہیں، تو اس کے لیے کچھ ٹیسٹنگ معیارات، جیسے پیکنگ یونیورسٹی اور چائنا یونیورسٹی آف جیو سائنسز سے مستند تشخیصات کو پورا کرنا لازمی ہے۔ چائنا میٹرولوجی ایکریڈیٹیشن سٹیمپ  کے ساتھ معائنہ رپورٹ کو مصنوعات کے معیار کی جانچ، نتائج اور عدالتی تشخیص کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے۔ یہ چائنا نیشنل ایکریڈیٹیشن سروس فار کنفارمیٹی اسسمنٹ کا معیار ہے، جس کا مطلب ہے کہ یہ معائنہ کرنے والی ایجنسی چین میں تسلیم شدہ ہے ۔

لائیو  ای کامرس بیرون ملک پاکستانی جیولری کی مقبولیت کو بڑھانے میں مدد دے سکتا ہے۔ پاکستانی جیولرز کے لیے، دنیا کی سب سے بڑی کنزیومر مارکیٹ سے بہتر طور پر فائدہ اٹھانے کے لیے، انہیں شاید ای کامرس کو سمجھنے کی ضرورت ہے، خاص طور پر لائیو ای کامرس  کا چین میں مصنوعات کی فروخت اور فروغ میں اہم کردار ہے ۔ عقیل نے کہا ہم اپنی مصنوعات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک قابل رسائی بنانے کے لیے لائیو سٹریمنگ شروع کرنے کا بھی منصوبہ بنا رہے ہیں۔ ہم لائیو سٹریمنگ کے ذریعے اپنی مصنوعات کو پیش کرنے، ان کے پیچھے ثقافت اور زیورات کی دیکھ بھال وغیرہ کے بارے میں معلومات کا اشتراک کرنے جا رہے ہیں، جو آف لائن شاپنگ کے لیے موثر طریقے سے تکمیلی ہے ۔

شنگھائی میں پاکستانی قونصل جنرل حسین حیدر نے سی ای این کو  انٹرویو میں بتایا کہ  ای کامرس اور دیگر ڈیجیٹل ٹولز کے استعمال میں اضافہ بالخصوص لائیو سٹریمنگ ایک جدید حکمت عملی ہے جسے پاکستانی کاروباری اداروں کو اپنانے کی ضرورت ہے۔ چین میں، ای کامرس پلیٹ فارم مصنوعات کی فروخت میں بہت مقبول اور طاقتور ہیں، اور لائیو سٹریمنگ پروڈکٹ کے فروغ میں کافی اہم ہے ۔

جب سے کووڈ 19کی وبا پھیلی ہے، چینی لوگ اپنے موبائل فونز کے ساتھ Taobao، JDاور TikTokجیسے ایشاپنگ پلیٹ فارمز پر تاجروں کی لائیو سٹریمنگ سے ملک بھر سے یہاں تک کہ پوری دنیا سے مختلف مصنوعات تلاش کرنے کے لیے تبدیل ہو رہے ہیں، حد سے زیادہ وقت اور جگہ کے  صرف ایک کلک کے ذریعے، ان کی پسند کی مصنوعات جلد ہی ان کے لیے ‘اڑ جائیں گی۔ 2020میں لائیو ای کامرس کی چینی مارکیٹ کا حجم 1.05 ٹریلین یوآن تک پہنچ گیا، جس کی توقع 2021 میں قریب سے دوگنا ہو جائے گی، اور 2020 میں چین کا جیولری کا آن لائن لین دین کا پیمانہ مصنوعات کے تمام زمرے میں چوتھے نمبر پر ہے، جس کی شرح 8.43 فیصد ہے   ۔ اضافہ جاری رکھنے کے لئے  لائیو سٹریمنگ کے ذریعے، پاکستانی زیورات زیادہ سے زیادہ چینی لوگوں کو معلوم ہوں گے، جس سے مستقبل میں فروخت میں ایک نئی بلندی کی راہ ہموار ہوگی