یو اے ای کی کابل ائرپورٹ سنبھالنے کیلیے طالبان سے بات چیت

105

دبئی(آن لائن )متحدہ عرب امارات نے افغانستان کے نئے حکمرانوں پر اثر و رسوخ کی سفارتی جنگ میں قطر کے خلاف جاتے ہوئے کابل ائرپورٹ کا انتظام چلانے کے لیے طالبان سے بات چیت کی۔ غیر ملکی خبررساںادارے کی رپورٹ کے مطابق خلیجی ملک میں موجود ایک مغربی سفارتکار نے بتایا کہ یو اے ای حکام نے ائرپورٹ کو آپریٹ کرنے کے حوالے سے
حالیہ ہفتوں میں طالبان عہدیداروں کے ساتھ سلسلہ وار ملاقاتیں کیں۔ یہ مذاکرات ظاہر کرتے ہیں کہ ممالک کس طرح طالبان کے زیر اقتدار افغانستان میں اپنا اثر و رسوخ بڑھانے کی کوشش کررہے ہیں حالانکہ شدت پسند اسلامی گروہ بڑی حد تک الگ تھلگ ہی ہے اور اب تک اسے کسی ملک کی حکومت نے تسلیم نہیں کیا۔ اس معاملے کی حساسیت کی وجہ سے نام ظاہر کرنے سے انکار کرنے والے ذرائع کے مطابق اماراتی حکام قطر کے سفارتی اثر و رسوخ کا مقابلہ کرنے کے خواہاں ہیں۔ اگست میں امریکا کے واپس جانے کے بعد افغانستان سے انخلا کی کوششوں میں اہم کردار ادا کرنے کے بعد قطری ترکی کے ساتھ مل کر حامد کرزئی انٹرنیشنل ائرپورٹ کو چلانے میں مدد کر رہے ہیں، اور کہہ چکے ہیں کہ وہ اس آپریشن کو سنبھالنے کے لیے تیار ہیں۔ تاہم 4 سفارتکاروں کا کہنا تھا کہ طالبان نے قطر کے ساتھ اب تک انتظامات کوحتمی شکل نہیں دی۔دوسری جانب طالبان اور قطری حکام نے اس حوالے سے بیان دینے کی درخواست پر کوئی ردِ عمل نہیں دیا۔ دو سفارتکاروں کا کہنا تھا کہ طالبان نے بھی یو اے ای سے مالی مدد مانگی ہے حالانکہ یہ واضح نہیں کہ یہ ائرپورٹ کے حوالے سے ہے یا نہیں۔