مشترکہ مفادات کونسل کا ایک اور فیصلہ پارلیمنٹ میں چیلنج

104

کراچی (اسٹاف رپورٹر)مشترکہ مفادات کونسل کا ایک اور فیصلہ پارلیمنٹ میں چیلنج کردیا گیا، حکومت سندھ نے متبادل توانائی کی نئی پالیسی کے خلاف پارلیمنٹ کو ریفرنس بھیج دیا ہے آئین پاکستان کے آرٹیکل 154کے تحت سندھ حکومت نے پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس بلانے کی درخواست کی ہے، حکومت سندھ نے درخواست کی ہے کہ پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں سی سی آئی فیصلے پر ووٹنگ کرائی جائے۔ وزیراعلیٰ سندھ مرادعلی شاہ نے اس حوالے سے پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس بلانے کے لیے اسپیکر قومی اسمبلی کو گزشتہ روز خط ارسال کیا ہے۔ وزیراعلیٰ سندھ نے صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی اور وزیراعظم عمران خان کو بھی خط ارسال کیا ہے ۔وزیراعلیٰ مراد علی شاہ نے اپنے خط میں کہا ہے کہ متبادل توانائی سے متعلق نئی پالیسی صوبوں پر زبردستی نہیں تھوپی جاسکتی۔ وزیراعلیٰ کے خط کے مطابق ہائیڈل پاور کو متبادل توانائی پالیسی میں شامل نہیں کیاجاسکتا ،سندھ حکومت نے وفاقی حکومت پر مشترکہ مفادات کونسل کے اجلاس کی کارروائی میں ردوبدل کرنے کا بھی الزام عائد کیا ہے۔ وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے اپنے خط میں سندھ میں جاری لوڈشیڈنگ کا بھی ذکر کیا ہے اور کہا ہے کہ سندھ کے لوگ بدترین لوڈشیڈنگ کا سامنا کررہے ہیں، بجلی کی پیداوار اور متبادل توانائی پالیسی میں قومی ضرورتوں کا غلط تعین کیاگیا ہے ۔