خبردار مہنگائی نیچے نہیں آئے گی، وزیر خزانہ

143

واشنگٹن: وزیر خزانہ شوکت ترین نے مہنگائی میں کمی نہ ہونے سے خبر دار کردیا ہے  اور صرف پاکستان میں نہیں دنیا بھر میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ ہو رہا ہے۔

وزیر خزانہ شوکت ترین نے واشنگٹن میں بات چیت کرتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان نے معاشی اصلاحات پر بہت کوششیں کی، صرف پاکستان میں نہیں دنیا بھر میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ ہو رہا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ  تیل سمیت دیگر اشیا دنیا بھر میں مہنگی ہو رہی ہیں اور کیوں ہورہی ہیں اس کی  وجہ معلو م نہیں جبکہ کورونا وبا کے اثرات کم ہوں گے تو مہنگائی نیچے آئےگی،  ملک کی 40 فیصد آبادی کو ٹارگٹڈ سبسڈی دیں گے۔

وزیر خزانہ نے کہا ہے کہ ہمارے پاس ڈیٹا بیس آگیا ہے جس سے پتا لگایا جاسکتا ہے کہ ہرگھرمیں آمدن کتنی ہے، اگلے 4 سے 5 سال میں ٹیکس ٹو جی ڈی پی شرح 20 فیصد تک لے کر جائیں گئے جبکہ توانائی سیکٹر  کے لیے معاہدے ہو چکے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ عالمی مالیاتی  ادارے (آئی ایم ایف) سے ایک ارب ڈالر ملنے کی توقع ہے،آئی ایم ایف کو اعدادوشمار دے دیے ہیں وہ آئندہ دو چار روز میں توثیق کریں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ موجودہ حکومت کے اسٹرکچرل اصلاحاتی اقدامات کو سراہا گیا ہے، ملکی معیشت کی بہتری کے لئے جامع اقدامات کیے جا رہے ہیں جن میں ٹریک اینڈ ٹریس برائے پاکستان ٹوبیکو، سیمنٹ، چینی اور بیوریجز انڈسٹری کی بہتری شامل ہے۔

وزیر خزانہ نے کہا کہ موجودہ حکومت اور اسٹیٹ بینک آف پاکستان کی جانب سے ترسیلات زر کے باضابطہ چینلز کے استعمال کی حوصلہ افزائی کیلئے فعال پالیسی جیسے اقدامات، کوویڈ 19 کے پیش نظر سرحد پار سفر کو کم کرنے اورغیر ملکی زرمبادلہ مارکیٹ کے حالات نے گزشتہ سال سے ترسیلات زر کی آمد میں مسلسل بہتری اور مثبت کردار ادا کیا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ ترکی کے ہم منصب سے ملاقات ہوئی ہے، ترکی سے زراعت،تعمیرات اور سیاحت کے شعبے میں تعاون پر بات ہوئی، انہوں  نے ٹیکسوں سے متعلق بھی مدد کی پیش کش کی ہے۔

دوسری جانب شوکت ترین کا کہنا ہے کہ امریکی معاون وزیر خارجہ سےبھی  ملاقات ہوئی ہے، امریکی معاون وزیر خارجہ سے  کہاہے کہ غلطیاں دونوں اطراف سے ہوئیں، اب آگے بڑھنا چاہیے۔

یاد رہے شوکت ترین کے وفاقی وزیرِ خزانہ کے عہدے پر رہنے کا آج آخری روز ہے جبکہ وزیرِ خزانہ کے طور پر اس مدت میں مزید توسیع نہیں ہو سکتی، شوکت ترین کو بطور وزیرِ خزانہ آج ڈی نوٹیفائی کر دیا جائے گا۔