غیر ضروری درآمدات سے معیشت پر جمود طاری ہوجائے گا، میاں زاہد حسین

101

کراچی (اسٹاف رپورٹر)نیشنل بزنس گروپ پاکستان کے چیئرمین، پاکستان بزنس مین اینڈ انٹلیکچولز فورم وآل کراچی انڈسٹریل الائنس کے صدراورسابق صوبائی وزیرمیاں زاہد حسین نے کہا ہے کہ اگربڑے پیمانے پر غیرضروری درآمدات اور زرعی اشیاء کی درآمد جاری رہی تو معیشت پرجمود طاری ہوجائے گا۔ مہنگائی کی ایک حد ہوتی ہے جس کا نتیجہ بے روزگاری کے بعد مانگ میں کمی کی صورت میں نکلتا ہے کیونکہ عوام اپنی آمدنی کا بڑا حصہ کھانے پینے اور یوٹیلیٹی بلز کی ادائیگی پرلگا نے پرمجبور ہوتے ہیں اس لیے کچھ اورخریدنے کے قابل نہیں رہتے۔ کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ ملک کو ترقی نہیں کرنے دے گا اس لیے اس سے بچنے کے لیے نقصان میں چلنے والے سرکاری اداروں کی نجکاری اور ری اسٹرکچرنگ ضروری ہے، ملکی معیشت کو بچانے کے لیے زراعت پر بھرپورتوجہ دی جائے، اجناس کی سپلائی بڑھائی اور ذخیرہ اندوزی روکی جائے، کیونکہ عالمی منڈی میں اگلے دوسال تک زرعی اشیاء کی قیمتوں میں کمی کا کوئی امکان نہیں ہے۔ میاں زاہد حسین نے کاروباری برادری سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ کورونا وائرس کی وجہ سے عالمی اداروں نے بہت سے ممالک کی مدد کی جبکہ سپلائی چین کے خلل اورنقل وحمل کے اخراجات میں بھی کئی گنا اضافہ ہوا ۔