سراج الحق نے کمر توڑ مہنگائی اور ہوشربا بیروزگاری کیخلاف ملک گیر احتجاج کی کال دے دی

249

لاہور(نمائندہ جسارت) امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے کمرتوڑ مہنگائی، بیروزگاری کی شرح میں ہوش ربا اضافہ اور حکمرانوں کی دیگر عوام دشمن پالیسیوں کیخلاف جمعہ 24 ستمبر کو ملک گیر احتجاج کی کال دی ہے۔منصورہ سے جاری بیان میں انہوں نے تمام طبقہ ہائے فکر سے اپیل کی ہے کہ ملک کے بڑے چھوٹے شہروں میں جماعت اسلامی کے زیراہتمام ریلیوں اور مظاہروں میں شرکت کریں اور حکمرانوں کو واضح پیغام دیں کہ وہ مزید ظلم اور ناانصافی سہنے کے متحمل نہیں ہو سکتے ،حکمران اپنا قبلہ درست کریں یا گھر جانے کی تیاری کرلیں۔امیر جماعت نے واضح پیغام دیا ہے کہ جماعت اسلامی آنے والے دنوں میں حکومت کے ظالمانہ اقدامات کے خلاف احتجاج میں مزیدشدت لائے گی۔ان کا کہناتھا کہ ملکی معیشت جو پہلے ہی سابق حکومتوں کی پالیسیوں کی وجہ سے کمزور اور لاچار تھی اب مکمل تباہی کے دہانے پر پہنچ چکی ہے۔ موجودہ حکومت نے ملکی تاریخ کا سب سے زیادہ قرضہ لیا اور عوام کومجموعی طور پر 50ہزار ارب کے لگ بھگ مقروض کردیا۔ ایک طرف آئی ایم ایف اور دیگر عالمی مالیاتی اداروں نے ملک کو نرغے میں لے رکھا ہے دوسری جانب مختلف مافیاز نے عوام کی گردن دبوچ رکھی ہے۔ سودی معیشت، کرپشن اور بیڈ گورننس کی وجہ سے پاکستان ہر آئے روز استحکام کے حصول کی منزل سے سالوں دور جارہا ہے۔ عوام اس فرسودہ نظام اور اس کے رکھوالوں کو مسترد کریں اور فلاحی اسلامی پاکستان بنانے کے لیے جماعت اسلامی کے ہم قدم بنیں۔سراج الحق نے کہا کہ حکومت نے گیس کی قیمتوں میں 30 فیصد کے قریب اضافہ کا منصوبہ بنایا ہے۔ بجلی پر سبسڈی ختم کرنے کا بھی اعلان ہواہے۔ پیٹرول کی قیمت پر آدھی سے زیادہ لیوی لی جارہی ہے۔ ادویات کی قیمتوں میں گزشتہ 3 برسوں میں 13 بار اضافہ ہوا ہے۔ اشیائے خورونوش جن میں بنیادی ضرورت کی اشیا مثلاً دالیں، گھی، چینی ، آٹا وغیرہ شامل ہیں کی قیمتیں 100سے 300 فیصد بڑھی ہیں۔ زرعی ادویات ، کھاد ، بیج اور زرعی ٹیکنالوجی وغیرہ عام کسان کی پہنچ سے دور ہیں۔ ڈی اے پی کھاد کی بوری جو 3 سال قبل 3 ہزار کی تھی اب 6 ہزار سے اوپر کی ملتی ہے۔دوسری طرف بیروزگاری کا طوفان نہیں تھم رہا۔ وزیراعظم نے ایک کروڑ نوکریاں دینے کااعلان کیا مگر الٹا 50لاکھ کو مزیدبے روزگار کردیا۔ مارکیٹ میں روزی کمانے کے ذرائع مخدوش ہوگئے ہیں۔ مزدور ، کسان، سرکاری ملاز م سب بے حال ہیں۔ کاروباری حضرات کی اکثریت اور خاص کر کے چھوٹا تاجر حالات کا رونا رو رہا ہے۔ انہوں نے کہایہ سب نااہل حکمرانوں کی نااہل پالیسیوں کی وجہ سے ہیں۔ پاکستان کو اللہ تعالی نے تمام نعمتوں سے نوازا ہے ، ہمارے پاس وسائل کی کمی نہیں مگر حکمرانوں کی نیت کا مسئلہ ہے جو اپنی جیبیں بھر کر عوام کو مجبور اور محروم رکھے ہوئے ہیں۔ انہوں نے قوم سے اپیل کی کہ وہ جمعہ کو اپنے حق کے لیے گھروں سے نکلیں اور جماعت اسلامی کے پلیٹ فارم سے پرامن احتجاج کریں۔ انہوں نے وعدہ کیا کہ اگر عوام نے جماعت اسلامی کا ساتھ دیا تو اللہ تعالی کی تائید و نصرت سے ملک کو ترقی کی شاہراہ پر ڈالیں گے۔