رہزنِ ہمّت…………اقبال

48

رہزنِ ہمّت ہْوا ذوقِ تن آسانی ترا
بحر تھا صحرا میں تْو، گلشن میں مثلِ جْو ہوا

اپنی اصلیّت پہ قائم تھا تو جمعیّت بھی تھی
چھوڑ کر گْل کو پریشاں کاروانِ بْو ہوا