ماہم زیادتی و قتل کیس: مجرمانہ غفلت برتنے والے افسران و اہلکاروں کے خلاف مقدمہ درج

222

کراچی: اعلیٰ پولیس حکام نے ماہم زیادتی و قتل کیس میں مجرمانہ غفلت برتنے والے افسران و اہلکاروں کے خلاف مقدمہ درج کرلیا ہے جبکہ سابق ایس ایچ او عامر حسین گرفتاری کے ڈر سے فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے۔

تفصیلات کے مطابق کراچی کے علاقے کورنگی میں جنسی زیادتی کے بعد قتل ہونے والی ماہم کیس میں اہم پیشرفت ہوئی ہے، سندھ پولیس کے اعلیٰ حکام نے ماہم کیس میں مجرمانہ غفلت برتنے والے زمان ٹاؤن تھانے کے ایس ایچ او سمیت 8 اہلکاروں کے خلاف مقدمہ درج کرلیاہے۔

سابق ایس ایچ او کے بیٹر دانیال سمیت پرائیویٹ پارٹی کے تین ساتھی گرفتار کرلیے گئے ہیں جبکہ سابق ایس ایچ او زمان ٹاؤن عامر حسین گرفتار ہوجانے کے ڈر سے فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے ہیں۔

اعلیٰ حکام کا کہنا ہےکہ ساتھی اہلکار عثمان اکبر، اویس، عمیر خالد اور بابر بھی فرار ہوگئے، بابر زمان ٹاؤن تھانہ شعبہ تفتیش میں تعینات تھا جبکہ گرفتار ملزمان میں پرائیویٹ پارٹی کے تنویر اور عدیل شامل ہیں۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق سابق ایس ایچ او عامر حسین نے مطلوب ملزم سے 9 لاکھ روپے رشوت لی تھی، عادل نامی آئی آر میں مطلوب گٹکا سیلر کو رکشوں سمیت پکڑا گیا تھا جبکہ سابق ایس ایچ او و دیگر اہلکاروں نے ملی بھگت سے ملزم عادل کو چھوڑا تھا۔

تفتیشی ٹیم کا کہنا ہے کہ سابق ایس ایچ او نے  ملزم کے خلاف ایف آئی آر درج نہیں کی بلکہ اس کو  علاقہ تک کراس کرایا گیا ہے۔

واضح رہے ماہم کیس والے روز بھی ایس ایچ او غفلت کا مظاہرہ کرتا رہا اور ایس ایچ او کو غفلت برتنے پر پہلے ہی معطل کردیا گیا تھا جبکہ سابق ایس ایچ او کے خلاف رشوت ستانی پر پہلے ہی خفیہ انکوائری ہورہی ہے۔