سعودی عرب نے آئین شکن تیونسی صدر کی حمایت کردی

131
تیونس: صدر قیس سعید سے سعودی وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان ملاقات کررہے ہیں

تیونس سٹی (انٹرنیشنل ڈیسک) سعودی عرب کے وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان السعود نے تیونس میں جمہوری حکومت کو گھر بھیجنے والے صدر قیس سعید سے ملاقات کی۔ جمعہ کے روز ہونے والی اس ملاقات کے بعد سعودی وزیر خارجہ نے ٹوئٹر پر لکھا ہے کہ انہوں نے صدر قیس سعید کو اطمینان دلایا ہے کہ سعودی عرب برادر ملک تیونس میں امن واستحکام اور خوشحالی کا خواہاں ہے۔ اس حوالے سے جو اقدامات کیے جائیں گے، سعودی عرب ان کا ساتھ دے گا۔ سعودی وزارت خارجہ کے مطابق شہزادہ فیصل نے تیونس کے صدر، عوام اور حکومت کو شاہ سلمان اور ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان اور سعودی عوام وحکومت کی طرف سے خیر سگالی کا پیغام پہنچایا۔ سعودی وزیر خارجہ نے اس موقع پر تیونس کی تازہ صورتحال اور ملک کے اقتصادی و صحت صورتحال میں استحکام لانے والے فیصلوں کا جائزہ لیا۔ تیونسی صدر نے کورونا وبا سے نمٹنے کے سلسلے میں بروقت مدد پر سعودی عرب کے فرمانروا شاہ سلمان اور ولی عہد کے فوری برادرانہ ردعمل پر ان کا شکریہ ادا کیا۔ سعودی وزیر خارجہ نے تیونس کے صدر سے کہا کہ سعودی عرب تیونس کے اندرونی معاملات میں عدم مداخلت کی پالیسی پر گامزن ہے۔ تیونس کے اندرونی امور کو ریاستی خودمختاری کا حصہ سمجھتے ہیں۔ سعودی عرب پھر یہ یقین دہانی کرانا چاہتا ہے کہ برادر ملک تونس کا امن و استحکام اسے بے حد عزیز ہے۔ سعودی وزیر خارجہ نے اس یقین کا اظہار کیا کہ تیونس کی قیادت موجودہ حالات سے نمٹنے کی اہل ہے۔ تیونس کے برادر عوام کی ترقی وخوشحالی اور باوقار زندگی کے اہداف حاصل کرسکتی ہے۔