ملزم ظاہر ذاکرجعفر کا مزید 3 روزہ جسمانی ریمانڈ منظور

346

اسلام آباد کی ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن عدالت نے  نور مقدم قتل کیس میں نامزد ملزم ظاہر ذاکرجعفر کا مزید 3 روزہ جسمانی ریمانڈ منظور کرلیا ہے جبکہ آج ملزم کو سخت سیکیورٹی میں اسلام آباد کی مقامی عدالت میں پیش کیا گیا تھا۔

لاہور، نور مقدم، احتجاج

تفصیلات کے مطابق  دوران سماعت سرکاری وکیل ساجد چیمہ نے عدالت کو بتایاہےکہ وقوعہ کی سی سی ٹی وی ویڈیوز حاصل کر لی ہیں، سی سی ٹی وی فوٹیج کا فرانزک کرانا ہے جبکہ سرکاری وکیل ساجد چیمہ نے عدالت کو بتایا کہ ملزم کو لاہور لے کر جانا ہے اور سی سی ٹی وی کا فرانزک کرانا ہے۔

 سرکاری وکیل کا کہنا ہے کہ  ملزم کا تین دن کا مزید جسمانی ریمانڈ منظور کرلیا ہے جبکہ دوران سماعت ملزم کے وکیل نے مؤقف اختیار کیا کہ اگر کوئی فرانزک ٹیسٹ کرانا ہے تو تصویر لیکر کروالیں، ملزم کو جسمانی طور پر لاہور لے جانے کی ضرورت نہیں۔

دوسری جانب ملزم کے وکیل نے کہا کہ اسلحہ اور موبائل فون برآمد ہو چکے ہیں، مزید جسمانی ریمانڈ کی ضرورت نہیں،  اس پر سرکاری وکیل نے کہا کہ ملزم کو لاہور لیکر جانا ہے، تصویر سے کام ہوتا ہے تو مزید ریمانڈ نہ مانگتے جبکہ سی سی ٹی وی ویڈیوز کا سارا ڈیٹا نکال لیا ہے۔

سرکاری وکیل نے کہا کہ عثمان مرزا کیس میں بھی تمام ملزمان کو لاہور لے جایا گیا تھا اور لاہور اس لیے لیکر جاتے ہیں تاکہ معلوم ہو سکے ویڈیو ایڈیٹ تو نہیں ہوئی جبکہ سی سی ٹی وی ویڈیوز کے فرانزک تک مزید جسمانی ریمانڈ منظور کیا جائے۔

ملزم کے وکیل نے کہا کہ  سات دن تک ریمانڈ پر سی سی ٹی وی ویڈیوز کا فرانزک کیوں نہیں کرایا، موبائل فون برآمدگی کے لیے بھی ریمانڈ لیا گیا تھا جبکہ پہلی دفعہ سن رہا ہوں کہ ویڈیو فرانزک کے لیے ملزم کا ریمانڈ پر ہونا ضروری ہے۔

سرکاری وکیل نے کہا کہ جج صرف تین دن کا ریمانڈ دیں، اسکے بعد جیل بھیج دیں جبکہ نور مقدم کے والد شوکت علی مقدم بھی اپنے وکیل شاہ خاور کے ہمراہ عدالت میں پیش ہوئے تھے۔

نور مقدم کے والد

سماعت کے بعد عدالت نے جسمانی ریمانڈ کی استدعا پر فیصلہ محفوظ کرلیا اور وقفے کے بعد عدالت نے ملزم ظاہر ذاکر جعفر کا مزید 3 روزہ جسمانی ریمانڈ منظور کرلیا ہے۔

خیال رہے کہ گزشتہ روز عدالت نے ملزم ظاہر جعفر کے والدین اور گھریلو ملازمین کو مزید 14 روز کے جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا تھا۔