اینٹی بائیوٹکس کی مختصر تاریخ

211

اینٹی بائیوٹک کی اصطلاح اینٹی بائیوسس سے ماخوذ ہے۔ اینٹی بائیوس کا مشاہدہ بہت سارے سائنسدانوں نے میڈیکل پلیٹوں (پیٹری ڈش) پر کیا ہے لیکن مفید مقصد کے لئے مصنوع (اینٹی بائیوٹک) کو دریافت کرنے اور ان کو استعمال کرنے کا سہرا الیگزینڈر فلیمنگ (1928) کو جاتا ہے۔

لندن میں ایک اسپتال کی لیبارٹری میں کام کرتے ہوئے انہوں نے پایا کہ اسٹیفیلوکوکس اوریئس پر مشتمل پلیٹ میں ایک آلودہ فنگس (Penicillium notatum) نے بیکٹیریوں کی نشوونما کو روکا ہے۔ انہوں نے اسے پینسلن نام دیا۔

کئی سال بعد آکسفورڈ یونیورسٹی کے فلوری، شین اور ہیٹلی، فنگس کے کلچر فلٹریٹ سے پینسلن کو الگ کرنے میں کامیاب رہے۔ یہ اسٹیفیلوکوسی اور دیگر اقسام کے بیکٹیریا کے انفیکشن کو ختم کرنے کیلئے موثر پایا گیا تھا۔

1946 میں واکس مین اور امریکہ کی روٹجس یونیورسٹی کے ان کے ساتھیوں نے ایک اور اہم اینٹی بائیوٹک اسٹریپٹومائسن کی اطلاع دی جو ایکٹینومیسائٹس ہے اور تپ دق کے خلاف مؤثر ہے۔

اس وقت سے دنیا کے مختلف حصوں سے جمع کیے گئے ہزاروں نمونوں سے الگ تھلگ اینٹی بائیوٹک پیدا کرنے والے حیاتیات کی منظم تلاش سے کئی ہزار اینٹی بائیوٹکس برآمد ہوئے ہیں۔ تاہم ان میں سے زیادہ تر کو زہریلا ہونے کی وجہ سے انسانوں پر اطلاق کے لئے موزوں نہیں پایا گیا۔ ان میں سے باقی طبی لحاظ سے کارآمد ثابت ہوئے ہیں۔ ان میں سے زیادہ تر اینٹی بائیوٹکس ایکٹینومیسائٹس، اسٹریپٹومیسیس اور فنگس کے ذریعہ تیار کی گئی ہیں۔