پنجاب حکومت کو بلدیاتی ادارے بحال کرنے کیلئے 28 جولائی تک مہلت

58

لاہور(نمائندہ جسارت)لاہور ہائی کورٹ نے پنجاب حکومت کو بلدیاتی ادارے بحال کرنے کے لیے 28جولائی تک مہلت دے دی۔گزشتہ روزبلدیاتی ادارے بحال نہ ہونے کے کیس کی لاہورہائیکورٹ میں سابق میئر لاہور اور دیگر کی درخواستوں پر جسٹس عائشہ اے ملک نے سماعت کی ۔چیف سیکرٹری پنجاب اور سیکرٹری بلدیات عدالت میں پیش ہوئے۔ جسٹس عائشہ اے ملک نے چیف سیکرٹری پنجاب سے استفسارکیا کہ بلدیاتی ادارے کیوں بحال نہیں کیے؟چیف سیکرٹری پنجاب نے جواب دیا کہ بلدیاتی اداروں کی بحالی سے متعلق کمیٹی تشکیل دے دی ۔جسٹس عائشہ اے ملک نے مزید استفسار کیا کہ اس کمیٹی نے کیا کرنا ہے اور یہ کب کام شروع کرے گی۔ چیف سیکرٹری نے جواب دیا کہ یہ کمیٹی عید کے بعد کام شروع کرے گی۔جسٹس عائشہ اے ملک نے چیف سیکرٹری پنجاب سے کہا کہ عدالت عظمیٰ کا حکم ہے اور اس پر پنجاب حکومت کو عمل کرنا ہوگا،پنجاب حکومت نیا جواب جمع کرائے ۔ لاہور ہائیکورٹ میں دائر درخواستوں میں حکومت پنجاب اورسیکرٹری بلدیات سمیت دیگر کو فریق بنایا گیا ہے۔ درخواست گزار نے موقف اختیار کیا ہے کہ عدالت عظمیٰ نے بلدیاتی اداروں کو بحال کرنے کا حکم دیا لیکن عدالت عظمیٰ کے تحریری فیصلے کے باوجود تاحال بلدیاتی اداروں کو بحال نہیں کیا گیا اور حکومت جان بوجھ کر عدالتی حکم پر عمل درآمد نہیں کر رہی ہے، بلدیاتی اداروں کی عدم بحالی کے باعث عوامی مسائل حل نہیں ہو پارہے ہیں، عدالت عظمیٰ کے فیصلے پر عمل درآمد نہ کرنا توہین عدالت کے زمرے میں آتا ہے لہٰذااستدعا ہے حکومت کیخلاف توہین عدالت کی کارروائی کا حکم دیا جائے ۔