شامی صدر بشار الاسد چوتھی بار صدر منتخب

155

دمشق: خانہ جنگی کے شکار ملک شام کے صدر بشار الاسد نے چوتھی مدت کے لیے اپنے منصب کا حلف اٹھا لیا ہے،  انہوں نے ایسے وقت میں حلف اٹھایا ہے جب ان کے ملک کی معاشی مشکلات شدید سے شدید تر ہو رہی ہیں۔

بین الاقوامی میڈیا کے مطابق  جنگ زدہ ملک شام میں صدارتی انتخابات کا انعقاد رواں برس مئی میں ہوا تھا اوراس الیکشن میں بشار الاسد بھاری اکثریت (پچانوے فیصد سے زائد ووٹ) سے ایک مرتبہ پھر صدر منتخب ہوئے تھے جبکہ گزشتہ روز ہفتہ 17 جولائی کو انہوں نے چوتھی مدت کے لیے حلف اٹھالیا ہے۔

میڈیا کے مطابق  حلف برداری کی تقریب دمشق میں واقع صدارتی محل میں منعقد ہوئی اور اس تقریب میں حکومت نواز سیاسی عمائدین، مذہبی اکابرین، اراکینِ پارلیمان، فوجی افسران اور اعلی سرکاری ملازمین نے شرکت کی۔

رپورٹس کے مطابق  امریکا سمیت مغربی اقوام اور شام کی اپوزیشن تنظیموں کے سبھی دھڑوں نے صدارتی انتخابی عمل کو غیر قانونی اور فراڈ قرار دیا تھا اور مغربی ممالک اس انتخابی عمل کو اقوام متحدہ کی منظور شدہ قراردادوں کے منافی خیال کرتے ہیں جبکہ  یہ قراردادیں شامی تنازعے کے حل سے متعلق ہیں۔

یاد رہے  شام کے سابق صدر حافظ الاسد کے بیٹے بشار الاسد سن 2000 سے مسندِ صدارت پر براجمان ہیں اور ان کی دوسری اور تیسری مدت صدارت میں اس عرب ملک کو شدید خانہ جنگی کا سامنا رہا ہے۔

اس خانہ جنگی کے دوران اسد اور ان کی حکومت پر مغربی اقوام کی بہت ساری پابندیوں کا نفاذ کیا گیا جو اب بھی برقرار ہیں، ان پابندیوں کے باوجود اسد کو روس اور ایران کی مالی و عسکری حمایت و امداد حاصل رہی ہے جبکہ مغربی مبصرین کے مطابق ان دونوں حلیفوں کی مدد سے اسد اپنا اقتدار ابھی تک سنبھالے ہوئے ہیں۔

بشار الاسد کے دور صدارت میں خانہ جنگی کے علاوہ اقتصادی اور سماجی مسائل بھی سنگین صورت اختیار کر چکے ہیں، مشرقِ وسطی کے اس ملک کی کرنسی پانڈ ہے اور یہ مسلسل زوال پذیر ہے۔

رپورٹس کے مطابق  مجموعی شرح نمو میں گرواٹ پیدا ہونے سے معیشت قریب قریب جمود کا شکار ہو چکی ہےاور اجناس اور دوسرا سامانِ خوراک بتدریج کمیاب ہوتا جا رہا ہے، ملک کی اقتصادی مشکلات بھی مسلسل بڑھتی جا رہی ہیں جبکہ بنیادی ضروریات زندگی بے پناہ حد تک مہنگی ہو چکی ہیں،  بازاروں میں عام اشیا کی قیمتیں بھی لوگوں کی قوتِ خرید سے باہر ہیں۔

اقوام متحدہ کے مطابق شام میں 80 فیصد سے زائد لوگ خطِ غربت سے نیچے زندگی بسر کرنے پر مجبور ہیں،   بظاہر خانہ جنگی قریب قریب ختم ہو چکی ہے لیکن سارے ملک کے اہم اور مختلف مقامات پر حکومتی کنٹرول برقرار رکھنے کے لیے ملکی و غیر ملکی فوجی دستے اور حکومت کی حامی ملیشیا کے اہلکار متعین ہیں۔

یہ امر اہم ہے کہ خانہ جنگی کی وجہ سے مجموعی آبادی کا نصف داخلی نقل مکانی اختیار کر چکے ہیں اور ہزاروں شامی مہاجرین یورپی ممالک میں بھی مہاجرت کی زندگی بسر کر ہے ہیں جبکہ شام میں خانہ جنگی بشار الاسد کی دوسری مدت کے دوران سن 2011 میں شروع ہوئی تھی۔