اقتدار ملا تو سود ختم اور قرضوں کے بجائے زکوٰۃ و عشر کا نظام نافذ کریں گے،سراج الحق

351
لاہور: امیر جماعت اسلامی پاکستان سراج الحق مرکزی تربیت گاہ کے شرکا سے خطاب کررہے ہیں

لاہور (نمائندہ جسارت)امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے کہا ہے کہ ملک اس وقت معاشی بحران ، سیاسی انتشار اور اخلاقی انحطاط کا شکار ہے ،آئی ایم ایف کی مرضی اور حکم نے ملک کی آزادی و مستقبل کو گہرے خطرات سے دوچار کردیاہے ، حکومت کی پالیسی آئی ایم ایف کے زیر اثر ہونے کی وجہ سے قومی معاشی صورتحال مزید ابتری کاشکار ہے ، نئے بجٹ کے اثرات سے مہنگائی میں مسلسل اضافہ ہورہاہے، حکومت بیروزگاری ، مہنگائی ، لوڈشیڈنگ جیسی اذیتوں کا حل نکالنے میں مکمل ناکام نظرآتی ہے ، پی ٹی آئی حکومت کی تین سالہ کارکردگی نے عوام کے صدمے اور شرمندگی کے احساس کو مزید گہرا کردیاہے ، اسلام کا نظام ہی انسانیت کی فلاح اور کامیابی کی ضمانت ہے، ملک میں اسلام کے نفاذ کے لیے عوام کی تائید کے ذریعے حقیقی تبدیلی چاہتے ہیں تاکہ ایک فلاحی ریاست کا حقیقی خواب پورا کیا جاسکے ،جماعت اسلامی کو موقع ملا تو آئی ایم ایف ، ورلڈ بینک سے قرضوں کے بجائے زکوٰۃ و عشر کے نظام سے ملک سے سودی نظام کا خاتمہ کریں گے ۔ ان خیالات کااظہار انہوں نے منصورہ میں مرکزی تربیت گاہ کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ سراج الحق نے کہاکہ نئے وفاقی بجٹ کے اثرات عوام کے لیے کورونا کی چوتھی لہر سے زیادہ خطرناک ہیں ۔ اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں ہر روز اضافہ کیا جارہاہے ۔ گزشتہ دو ہفتوں کے دوران پٹرولیم مصنوعات ، گیس ، بجلی ، آٹا، چینی ،گھی کی قیمتوں میں بار بار اضافہ کیا جاچکاہے ۔ عوام جنہوںنے گزشتہ الیکشن میں پی ٹی آئی کی سپورٹ کی تھی ، آج وہ اس کی کارکردگی کی وجہ سے شدید شرمندگی اور مایوسی کا شکار ہیں ۔ حکومت مہنگائی ، بے روزگاری ، لوڈشیڈنگ کا حل نکالنے سے قاصر ہے ۔ پاکستانی عوام حکومت کے پیدا کردہ حالات کی وجہ سے بہت سارے مسائل اور الجھنوںکا شکار ہیں ۔ اس وقت ملک بحرانوں کی زد میں ہے ۔ معاشی بحران اور سیاسی انتشار کے ساتھ ساتھ قوم اخلاقی انحطاط کا شکار ہورہی ہے۔ سراج الحق نے کہاکہ وزیراعظم نے عوام سے کیے گئے وعدے پورے کرنے کے بجائے بالکل اس کے برعکس مسلسل اقدامات کیے ہیں جس سے نوجوانوں میں بڑے پیمانے پر مایوسی اور بے چینی پائی جاتی ہے ۔ انہوںنے کہاکہ حکومت کے خلاف اپنی تحریک کو جاری رکھیں گے اور آنے والے دنوں میںاس کو مزید منظم کرتے ہوئے بڑے پیمانے پر عوامی جلسوں کا اہتمام کیا جائے گا ۔ حکومت کو مجبور کریں گے کہ وہ عوام سے کیے گئے اپنے وعدے پورے کرے ۔ انہوںنے کہاکہ موجودہ حکومت کسی بھی سرکاری ادارے میں رتی بھر بہتری نہیں لاسکی ۔ دنیا کاواحدملک ہے جہاں دعوے ایمانداری و دیانتداری کے ہیں لیکن کرپشن میں اضافہ ہورہاہے ۔ سراج الحق نے کہاکہ حکومت نے براہ راست غریب کی جیب پر ہاتھ ڈال رکھاہے جس کے ذریعے کئی سو ارب روپے قیمتوں میں اضافے اور مختلف ٹیکسز کی وصولی کی کی صورت میں بٹورے جاچکے ہیں ۔ انہوںنے کہاکہ حکومت نے اپنا رویہ تبدیل نہ کیا تو وہ وقت دور نہیں جب عوام بڑے پیمانے پر جماعت اسلامی کے پلیٹ فارم پر جمع ہو کر حکومت کا احتساب کریں گے ۔ جماعت اسلامی اپوزیشن کا حقیقی کردار ادا کرتے ہوئے عوام کی آواز بنے گی اور حکومت کے ظالمانہ اقدامات کے خلاف مزاحمتی جدوجہد کو جاری رکھے گی ۔ سراج الحق نے کہاکہ کارکنان ملک میں سودی نظام کے خاتمے اور حکومت کی طرف سے ہونے والی زیادتیوں کے خلاف اپنی جدوجہد کو تیز کردیں ۔ جماعت اسلامی اب بہترین آپشن ہے وہ وقت دور نہیں جب پاکستان کے اندر حقیقی معنوں میں اللہ کا قانون نافذ اور اسلامی فلاحی راست کا خواب شرمندہ تعبیر ہوگا۔