بوسنیا: قتل عام کو 26 برس گزرنے پر ملک گیر مارچ

132
بوسنیا: سربرینیتسا قتل عام کی چھبیسویں برسی کے موقع پر امن ریلی نکالی جارہی ہے

سرائیوو (انٹرنیشنل ڈیسک) بوسنیا میں سربرینیتسا کے قتل عام کو 26 برس گزرنے پر ملک گیر مارچ کا اہتمام کیا گیا،جس میں ہزاروں افراد نے شرکت کی۔ خبررساں اداروں کے مطابق بوسنیا اور ہرزگووینیا میں ہرسال سربرینیتسا کے قتل عام کی یاد میں مارچ کا اہتمام کیا جاتا ہے،جس میں دنیا بھر سے لوگ شریک ہوتے ہیں۔ مارچ کی انتظامیہ کی جانب سے جاری بیان میں بتایا گیا کہ جمعرات کے روز نیزوک میں ہونے والے مارچ کے دوران 3ہزار سے زائد افراد نے شرکت کی۔ ان میں ایک بڑی تعداد تُرک شہریوں کی تھی۔ اس کے علاوہ امریکا ، اٹلی اور سربیا سے بھی لوگوں نے شرکت کی۔ ذرائع ابلاغ کے مطابق 26برس قبل کیے گئے قتل عام کی مذمت کا سلسلہ 3روز تک جاری رہے گا اور اس دوران مختلف اجتماعات کی صورت میں نسل کشی کے واقعات پر روشنی ڈالی جائے گی۔ یاد رہے کہ جولائی 1995ء میں بوسنیائی سرب فورسز نے سربرینیتسا پر حملہ کرکے 8ہزار مسلمانوں کو بے دردی سے شہید کردیا تھا۔ اس دوران عالمی امن کی نام نہاد محافظ ڈچ فوج وہاں خاموش تماشائی بنی رہی تھی۔ کارروائی کے دوران 15ہزار سے زائد شہریوں نے جنگلوں میں روپوش ہوکر اپنی جانیں بچانے کی کوشش کی،تاہم سرب فورسز نے چن چن کر 6ہزار افراد کو شہید کیا۔ سربرینیتسا کے علاقے پوٹوکاری میں آج بھی 6ہزار 696افراد کی قبریں موجود ہیں۔