بجٹ پاس کرانے میں پی پی اور ن لیگ نے حکومت کی معاونت کی ،سراج الحق

207
لاہور: سراج الحق منصورہ میں سید مودودی ؒانسٹیٹیوٹ کے طلبہ سے خطاب کررہے ہیں

لاہور(نمائندہ جسارت) امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے کہا ہے کہ پی ٹی آئی ، نون لیگ اور پی پی یک جان 3 قالب ہیں۔بجٹ پاس کرانے میں بڑی اپوزیشن جماعتوں نے حکومت کی بھرپور معاونت کی۔ ثابت ہوگیا کہ تینوں آئی ایم ایف اور ایف اے ٹی ایف کی تابع داری میں ایک ہیں۔ ساری لڑائی اسٹیبلشمنٹ سے دودھ کا فیڈر حاصل کرنے پر ہو رہی ہے ۔ پی ٹی آئی کی حکومت نے عام آدمی کو لوٹا اور مافیاز کو نوازا۔ ملک کی معیشت اور نظریہ خطرات کی زد میں ہے۔ معاشرے میں امیر اور غریب کا خلا خطرناک حد تک پہنچ چکا ہے۔ 2 کروڑ بچے اسکولوں سے باہر اور2کروڑ نوجوان بے روزگار ہیں۔ اسمبلیوں میں بیٹھا اشرافیہ اپنے مفادات کی جنگ لڑرہاہے ، عوام کا کوئی پرسان حال نہیں۔ کوئی ایسا نصاب قبول نہیں کریں گے جو دو قومی نظریے سے متصادم ہو۔ نوجوانوں کو دینی اور عصری تعلیم سے روشناس کرانا ضروری ہے۔ مدارس اصلاحات کی آڑ میں انہیں ختم کرنے کی سازش کا مقابلہ کریں گے۔ مومن دین اور دنیا کو الگ الگ نظر سے نہیں دیکھتا۔ مسلمانوں کو ان کے دین سے دور کرنے کی مغربی سازشیں کبھی کامیاب نہیں ہوں گی۔ امت متحد ہوکر مسائل کا مقابلہ کرے۔ نوجوان دین کے پیغام کو عام کریں۔ دشمن ہمیں تقسیم اور اللہ عزوجل ایک دیکھنا چاہتا ہے سوال یہ ہے کہ ہمیں دشمن کی طرف جانا چاہیے یا اپنے مالک حقیقی کی طرف رجوع کرنا چاہیے۔ وہ منصورہ میں سید مودودیؒ انسٹیٹیوٹ کے طلبہ سے خطاب کررہے تھے۔ امیر جماعت نے کہا کہ تعلیم اور صحت کے سیکٹرز میں بنیادی اصلاحات متعارف کرانا پڑیں گی۔ تمام شعبوں میں بہتری لانے کے لیے قرآن و سنت کی جانب رجوع ضروری ہے مگر مغرب زدہ حکمرانوں کو یہ توفیق کبھی نہیں ہوئی۔ انہوں نے کہا جمہوریت کا راگ الاپنے والے دراصل خود جمہوری اقدار کے منافی کام کرتے ہیں۔ مغرب کی جمہوریت بودی اور دراصل سرمایہ دارانہ نظام اور فحاشی اور عریانی کی محافظ ہے۔ یہی وجہ ہے کہ آج مغرب میں لوگ سرمایہ دارانہ نظام کے خلاف سراپا احتجاج ہیں۔ اسلام ایسی جمہوریت کی بات کرتا ہے جو قرآن و سنت کے تابع ہو، جس میں لوگ مل کر لوگوں کی بہتری اور فلاح کے لیے فیصلے کریں۔ بدقسمتی سے 70 سال سے ہم پر مسلط طبقے نے بھی اسلام کے بجائے مغربی اقدار کو پروان چڑھایا اور ملک کے نظریے اور بانیان پاکستان کے ساتھ بے وفائی کی۔ انہوں نے کہاکہ ضرورت اس امر کی ہے کہ نوجوانانِ پاکستان ان سازشوں کا مقابلہ کریں اورامام غزالیؒ، ابن تیمیہ ؒ، سید مودودیؒ ، حسن البناؒ اور سید قطبؒ کی طرح اپنے زمانے کی امامت کریں۔ انہوں نے طلبہ کو مبارکبا دی کہ ایسے وقت میں جب ملک میں لاکھوں بچے غربت کی وجہ سے اسکولوں سے باہر ہیں انہیں یہ موقع ملا کہ علم کی نعمت سے اپنے سینوں کو سرفراز کریں۔ اس نعمت کا شکر بجا لانا یہ ہے کہ جب طلبہ پریکٹیکل زندگی میں جائیں تو دین کی سربلندی اور انسانیت کی بھلائی ان کا مطمع نظر ہو۔سراج الحق نے اسلام کی سنہری تاریخ کے واقعات کاتذکرہ کرتے ہوئے طلبہ کو تلقین کی کہ وہ اللہ کے دین کی سربلندی کے لیے جدوجہد اپنی زندگی کا مقصد بنالیں۔انہوںنے کہاکہ جماعت اسلامی چاہتی ہے کہ یونیورسٹیز اور مدارس کو جدید تعلیمی سہولیات سے آراستہ کیا جائے ۔ تعلیم کے شعبے کے لیے جی ڈی پی کازیادہ سے زیادہ حصہ مختص کیا جائے ۔ انہوں نے کہاکہ ملک تعلیمی انقلاب سے ہی ترقی کی راہ پر گامزن ہوسکتاہے۔