‘امریکی صدراگر عمران خان سےبات نہیں کرناچاہتےتو نہ کریں، یہاں بائیڈن کاکوئی انتظارنہیں کررہا’

173

اسلام آباد: پاکستان کے مشیر قومی سلامتی ڈاکٹر معید یوسف نے کہا واشگاف الفاط میں کہا ہے کہ امریکی صدر بات نہیں کرنا چاہتے تو نہ کریں، ڈومور کہنا ہے تو بہتر ہے فون نہ کریں جبکہ ہم  وہی کریں گے جو پاکستان کے مفاد میں ہوگا۔

میڈیا  کے مطابق  ایک ٹی وی پروگرام  میں گفتگو کرتے ہوئے مشیر قومی سلامتی کا کہناتھا کہ  ہم  وہی کریں گے جو پاکستان کے مفاد میں ہوگا،  جو مفاد میں نہیں ہوگا وہ نہیں کریں گے۔

معید یوسف نے مزید کہاکہ ہم چاہتے ہیں کہ امریکہ کے ساتھ مثبت طریقے سے بات ہو، جس میں پاکستان سمیت خطے کافائدہ ہو، ہم امریکا کے ساتھ تعلقات خراب کرنا نہیں چاہتے۔

خیال رہے  گزشتہ روز بھی معید یوسف نے کہا تھا کہ امریکی صدر جوبائیڈن اگر وزیراعظم عمران خان سے بات نہیں کرنا چاہتے تو نہ کریں، یہاں بائیڈن کا کوئی انتظار نہیں کر رہا،  صرف الزامات لگانے ہیں اور اڈوں کی بات کرنی ہے تو وقت ضائع نہ کریں، گڈ لگ بائیڈن۔

معید یوسف کا کہنا تھا کہ ہم چاہتے ہیں کہ افغانستان میں استحکام آئے اور خانہ جنگی نہ ہو،  فغانستان میں جو حالات بن رہے ہیں وہ سب کے سامنے ہیں، افغانستان کی صورتحال پر بہت سے ممالک نے تشویش کا اظہار کیا ہے۔

دوسری جانب چند روزقبل بھی بیان میں معیدیوسف نے کہا تھا کہ پاکستان دہشتگردی کا شکار رہا ہے، تمام سرحدوں سے اس کے خلاف منصوبہ بندی، حمایت اور اسپانسر پر مبنی دہشت گردی مسلط کی گئی جو بدقسمتی سے آج بھی ایک حقیقت ہے۔

مشیر قومی سلامتی نے کہاکہ دہشت گرد ہمارے ملک اور خطے میں عدم استحکام پیدا کرنے کے لیے مستقل طور پر فعال رہتے ہیں۔ لیکن عالمی سطح پر خود کو دہشت گردی کے خلاف  تعاون کے حامی کے طور پر پیش کرتے ہیں۔