کوروناوائرس کی نئی قسم کمزور افراد کو ہلاک کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے، ڈبلیو ایچ او

260

جنیوا: عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) نے کہا ہے کہ کورونا وائرس کی بھارتی قسم ڈیلٹا سریع الحرکت تیزی سے پھیل رہی ہے اور اب تک کی ایسی قسم ہے جو کمزور افراد کو تلاش کرکے ہلاک کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق گزشتہ روز کی جانے والی نیوز کانفرنس کے دوران عالمی ادارے کے ہیلتھ ایمرجنسیز کے ایگزیکٹیو ڈائریکٹر ڈاکٹر مائیک ریان کا کہناتھاکہ ڈیلٹا مزید جان لیوا ہوسکتی ہے کیونکہ انسانوں کے درمیان اس کی منتقلی بہت زیادہ مؤثر طریقے سے ہوتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ڈیلٹا قسم بتدریج ایسے کمزور افراد تلاش کرلے گی جو بہت زیادہ بیمار ہوجائیں گے، ہسپتال میں داخل ہوگے اور ان کی ہلاکت کا خطرہ ہوگا۔

انہوں نے کہاکہ کورونا کی یہ مخصوص قسم سریع الحرکت اور حالات سے مطابقت پیدا کرنے والی ہے، جو سابقہ اقسام کے مقابلے میں کمزور افراد کو زیادہ افادیت سے منتخب کرتی ہے اور اگر لوگوں کی ویکسینیشن نہیں ہوئی تو وہ مستقبل میں خطرے کی زد میں ہوں گے۔

دوسری جانب عالمی ادارہ صحت نے امیر ممالک سے مطالبہ کیا ہےکہ وہ ڈیلٹا کے پھیلاؤ کی رفتار کو سست کرنے کے لیے غریب ممالک کو مزید ویکسینز عطیہ کریں جبکہ ڈبلیو ایچ او کی کووڈ 19 کی ٹیکنیکل ٹیم کی سربراہ ماریہ وان کرکوف نے کہاہےکہ ڈیلٹا قسم اب تک 92 ممالک تک پہنچ چکی ہے۔

ماریہ وان نے کہا بدقسمتی سے ہم اب تک درست مقامات پر لوگوں کی زندگیاں بچانے کے لیے ویکسینز فراہم نہیں کرسکے۔

خیال رہےکہ کورونا کی یہ قسم سب سے پہلے بھارت میں سامنے آئی تھی جس کے نتیجے میں وہاں دوسری لہر کے دوران ریکارڈ کیسز اور اموات ہوئی تھیں۔

عالمی ادارے کے عہدیداران کا کہنا تھا کہ ڈیلٹا جلد عامی سطح پر کورونا کی بالادست قسم ہوگی، جس نے برطانیہ میں ایلفا قسم کو پیچھے چھوڑ دیا ہے اور جلد امریکا میں بھی غلبہ حاصل کرنے والی ہے۔

عالمی ادارہ صحت نے کچھ عرصے قبل باعث تشویش قسم قرار دیا تھا، یعنی یہ زیادہ تیزی سے پھیل سکتی ہے، زیادہ جان لیوا اور ویکسینز کے خلاف زیادہ مزاحم کرتی ہے۔

ڈیلٹا قسم ایلفا کے مقابلے میں بظاہر 60 فیصد زیادہ متعدی ہے جو پہلے ہی دیگر اوریجنل وائرس کے مقابلے میں 50 فیصد زیادہ متعدی قرار دی گئی ہے۔

برطانوی ڈیٹا کے مطابق ڈیلٹا سے متاثر افراد میں ہسپتال داخلے کا خطرہ دوگنا زیادہ ہوتا ہے۔ ایسا خیال کیا جارہا ہے کہ ویکسین کی پہلی خوراک کے استعمال سے اس نئی قسم سے زیادہ تحفظ حاصل نہیں ہوتا۔

واضح رہے تحقیق میں دریافت کیا گیا تھا کہ فائزر یا ایسٹرا ینیکا ویکسینز کی پہلی خوراک سے ڈیلٹا کی علامات والی بیماری سے محض 33 فیصد تحفظ ملتا ہے، تاہم 2 خوراکوں سے تیہ شرح کافی زیادہ بڑھ جاتی ہے۔