بلوچستان کا 584 ارب روپے کا بجٹ پیش، تنخواہوں میں 10 فیصد اضافہ

329

کوئٹہ : بلوچستان اسمبلی کا اجلاس عبدالقدس بذنجوکی زیر صدارت منعقد ہوا ، جس میں صوبائی وزیر خزانہ بلوچستان میر ظہور بلیدی نے مالی سال22-2021کا بجٹ پیش کیا۔

صوبائی وزیر خزانہ بلوچستان نےبجٹ پیش کرتے ہوئے کہا کہ آئندہ مالی سال کیلئے متوازن  بجٹ تیار کیا گیا ہے،بلوچستان کے آئندہ مالی سال کا مجموعی بجٹ 584ارب روپے ہے،سرکاری ملازمین کی تنخواہوں اور پنشن میں 10فیصد اضافے کی تجویز دی گئی ہے۔

ظہور بلید ی کا کہنا تھا کہ آئندہ مالی سال کیلئے ترقیاتی بجٹ کا تخمینہ 189.19ارب روپے ہے، ترقیاتی بجٹ کاتخمینہ 179.19ارب روپےہے،کورونا وبا سے نمٹنے کیلئے 3.6ارب روپے مختص کرنے کی تجویز ہے۔

صوبائی وزیر خزانہ نے کہا کہ نئی 2086ترقیاتی اسکیموں کیلئے 76ارب روپے،  جاری ترقیاتی اسکیموں کیلئے 112ارب روپے سے زائد مختص کیے گئے ہیں، آئندہ مالی سال میں دیہی ترقی کی 140نئی اسکیموں کیلئے 3ارب روپے اور نئے مالی سال کیلئے صوبے بھر میں 49نئے ڈیمز کی تعمیر کیلئے 6.451بلین روپے مختص کیے ہیں۔

ظہور احمد بلیدی کا کہنا تھا کہ مالی سال 2021-22میں صحت کے شعبے  کیلئے 44بلین سے زائد رقم مختص کیے ہیں، بلوچستان حکومت ہیلتھ کارڈ کا اجر کرنے جارہی ہے، ہیلتھ کارڈ کے ذریعے 10لاکھ روپے تک کا علاج کرایا جاسکے گا،ڈاکٹرز اور طبی عملے کی رہائش گاہوں کیلئے 10کروڑ روپے مختص کیے گئے ہیں۔

انہوں نے مزید کہاکہ نئے مالی سال میں 100اسکولوں کے قیام کیلئے  1500ملین روپے کی رقم مختص کی گئی،نئےمالی سال میں 198اسکولوں کی اپ گریڈیشن کی جائے گی۔