طالبعلم سے زیادتی ، مفتی عزیز الرحمن پر مقدمہ درج

77

لاہور (آن لائن) شمالی چھاﺅنی کے علاقے میں ایک مدرسے کے عمر رسیدہ استاد مفتی عزیز الرحمن کی طالبعلم سے زیادتی کی وڈیو سامنے آنے کے بعد مقدمہ درج کر لیا گیا ۔ مقدمہ متاثرہ طالبعلم صابر شاہ کی مدعیت میں مفتی عزیز الرحمن ، ان کے تین بیٹوں، ان کے ایک ساتھی اور 2 نا معلوم افراد کے خلاف درج کیا گیا ہے، جس میں377 اور 506 کی دفعات درج کی گئی ہیں۔ایف آئی آر کے متن میں مفتی عزیز الرحمن نے امتحان میں اپنی جگہ کسی اور طالبعلم کو بٹھانے پر مجھے3 سال تک وفاق المدارس کے امتحانات میں بیٹھنے پر پابندی لگادی تھی لیکن میری جانب سے منت سماجت پر بدفعلی پر آمادہ کیا اور میں مجبوری میں ان کی چال اور زیادتی کا نشانہ بنتا گیا اور انہوںنے کئی مرتبہ جنسی استحصال کا نشانہ بنایا ۔ اس کے باوجود میرے لیے کچھ نہ کرنے پر میں نے انتظامیہ سے رجوع کیا لیکن میر ی بات کو تسلیم نہ کیا گیا ،جس کے بعد میں نے مجبور ہو کر خودچوری سے اپنی وڈیو بھی بنائی اور اس کے ثبوت وفاق المدارس عربیہ کے ناظم اعلیٰ کو بھی پیش کیے ۔اس بارے میں معلوم ہونے پر مفتی عزیز الرحمن نے مجھے قتل کرنے کی اور سنگین نتائج کی دھمکیاں دینا شروع کر دیں اور چند روز قبل جب کسی نے یہ وڈیو وائرل کر دی تو میں نے خود کو نقصان پہنچانے کے لیے ایک وڈیو ریکارڈ کی ۔ مقدمے میں مفتی عزیز الرحمن پر بد فعلی جبکہ ان کے بیٹوں الطاف الرحمن، عتیق الرحمن اور لطف الرحمن ، ان کے ساتھی عبد اللہ او ر2نامعلوم افراد کے خلاف جان سے مارنے کی دھمکیاں دینے کے الزام میں مقدمہ درج کیا گیا ہے ۔مفتی عزیز الرحمن کو مدرسے سے فارغ کر دیا گیا ہے جبکہ جمعیت علما اسلام (ف) نے بھی ان کی بنیادی رکنیت معطل کر دی ہے۔