نیب نے جعلی اکائونٹس کیس میں وصول رقم سندھ حکومت کو لوٹادی

95

اسلام آباد(آئی این پی) قومی احتساب بیورو(نیب)راولپنڈی نے جعلی اکائونٹس کیس میں 8کروڑ 14 لاکھ روپے سے زائد رقم کے چیک حکومت سندھ ،سمٹ بینک اور سندھ بینک کے نمائندوں کے حوالے کیے ہیں۔ڈائریکٹر جنرل نیب راولپنڈی عرفان نعیم منگی نے ایک تقریب کے دوران یہ چیک حکومت سندھ، سمٹ بینک اور سندھ بینک کے نمائندوں کے حوالے کیے۔روشن سندھ بینک پروگرام کے تحت سولر ا سٹریٹ لائٹس کی تنصیب میں بدعنوانی کے مقدمہ میں 4.95 ملین روپے سندھ حکومت کے حوالے کیے گئے ہیں۔ اومنی گروپ کی جانب سے سمٹ بینک سے دھوکادہی سے قرضہ حاصل کیا۔ اومنی گروپ کی بے نامی کمپنی پارک ویو اسٹاک اینڈ کیپیٹل پرائیوٹ لمیٹڈ سے 37.5ملین روپے وصول کر کے سمٹ بینک کے حوالے کیے گئے۔حسین لوائی نے سندھ بینک کے ملازمین کی ملی بھگت سے اومنی گروپ کیلیے بے نامی قرضہ حاصل کیا۔ ان سے37.5ملین روپے ریکور کر کے سندھ بینک کو واپس کئے گئے۔نیب راولپنڈی نے جعلی بینک اکائونٹ کیس میں اب تک 14 بد عنوانی کے ریفرنس دائر کئے ہیں۔ 13انویسٹی گیشن اور 18 انکوائریاں کی گئی ہیں۔ ملزمان سے مجموعی طور پر 33 ارب روپے سے زائد کی رقم برآمد کر کے قومی خزانے میں جمع کرائی گئی ہے۔ 20ملزمان نے پلی بارگین کی ہے۔ نیب نے 69 ملزمان کے وارنٹ گرفتاری جاری کئے ۔ 57 ملزما ن کو گرفتار کیا، 10ملزمان اشتہاری ہیں جبکہ دو ملزمان نے گرفتاری سے پہلے پلی بارگین کرلی۔ ان مقدمات میں 186 ملزمان کے نام ای سی ایل میں ڈالے گئے ہیں۔جعلی بینک اکائونٹس کیس کے مرکزی ملزموں میں سابق صدر آصف علی زرداری، سابق وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف، سابق وزیر اعظم سید یوسف رضا گیلانی ، رکن صوبائی اسمبلی سندھ فریال تالپور ، وزیر اعلی سندھ سید مراد علی شاہ، سابق وزیر اعلی سندھ سید قائم علی شاہ ، سابق وزیر اطلاعات سندھ شرجیل انعام میمن، سابق ڈپٹی چیئرمین سینیٹ سینیٹر سلیم مانڈوی والا، ڈائریکٹر اومنی گروپ خواجہ انور مجید، چیف ایگزیکٹواومنی گروپ عبدالغنی مجید، ڈائریکٹر اومنی گروپ خواجہ علی کمال مجید، ڈائریکٹر اومنی گروپ نمر مجید ، سابق صدر عارف حبیب گروپ حسین لوائی ، سابق صدر سندھ بینک بلال شیخ ، سابق ڈائریکٹر جنرل ایس بی سی اے منظور قادر کاکا خیل ، سابق سیکرٹری محکمہ خصوصی اقدامات سندھ اعجاز احمدخان، سابق میٹرو پولیٹن کمشنر کے ایم سی متانت علی خان، سابق میٹرو پولیٹن کمشنر کے ایم سی سمیع الدین صدیقی، سابق ڈائریکٹر جنرل پارکس اینڈ ہارٹیکلچر کے ایم سی لیاقت علی خان قائمخانی اور سابق ایڈمنسٹریٹر کے ایم سی محمد حسین سید شامل ہیں۔