عوام کی جیب خالی ہے تو بجٹ جعلی ہے، اپوزیشن لیڈر

156

اسلام آباد: اپوزیشن لیڈرو مسلم لیگ ن  کے رہنما شہباز شریف کا کہنا ہےکہ عوام کی جیب خالی ہے تو بجٹ جعلی ہے،383ارب کے نئے ٹیکس لگنے کے ساتھ 120ارب کے نئے انکم ٹیکس لگیں گے،جس کی وجہ سے مزید بدحالی آئے گی اور مہنگائی آسمان پر جائے گی۔

قومی اسمبلی کے اجلاس میں 3روز بعد تقریر کرنے پر شہباز شریف نے حکومت پر وار کرتے ہوئے کہا کہ حکومت نیا پاکستان نہیں بناسکی کچھ تو کرکے دکھا تی،تقاریر اور باتوں سے قومیں نہیں بنتیں ، دن رات ایک کرنا پڑتا ہے۔

اپوزیشن لیڈر کا کہنا تھا کہ یہ ڈکٹیٹر شپ کا نظام  نہیں کہ ڈنڈے سے ہر چیز چلادیں،اسپیکر جلد بازی میں کی گئی قانون سازی پر کمیٹی بنائیں، تاخیری کی وجہ سے ایم ایل ون منصوبے  کی لاگت میں 40فیصد اضافہ ہوچکا ہے۔

مسلم لیگ ن کے رہنما نے کہا کہ حکومت مشینری پر سیلز ٹیکس ختم کرے اوربجلی کی قیمتیں  ہمارےدور کے مطابق کی جائیں،ایل پی جی اور آر ایل این جی پر  ٹیکس  ختم کیے جائیں۔

شہباز شریف کا کہنا تھا کہ حکومت مزدور کی کم از کم اجرت 25ہزار اوربچوں  کے دودھ پر ڈیوٹی واپس لے کر اشیائے ضروریہ پر  ٹیکس ختم  کیے جائیں،شرم کی بات ہے خطے میں کورونا ویکسین لگانے والے ممالک میں  پاکستان کا آخری نمبر ہے۔

انہوں نے مزید کہاکہ پشاور میں لیڈی ریڈنگ اسپتال کی چھت ٹپکتی ہے، نفرت اور انتقام سے قومیں نہیں بنتی،وزیرپیٹرولیم حقائق کی بنیادپرجھوٹاثابت کردیں توسیاست چھوڑدوں گا،توانائی منصوبوں میں کنفیوژن پیداکرنامناسب نہیں۔