عبادات میں مصروف فلسطینی مسلمانوں پر اسرائیلی جارحیت ظلم کی انتہا ہے، لیاقت بلوچ

134

لاہور: نائب امیر جماعت اسلامی پاکستان لیاقت بلوچ نے کہا کہ ماہ رمضان ،تراویح اور عبادات میں مصروف فلسطینی مسلمانوں پر مسجداقصیٰ میں اسرائیلی جارحیت ، پرامن نہتے نمازیوں پر حملہ ظلم کی انتہا اور عالم اسلام کی غیرت ایمانی پر حملہ کے مترادف ہے۔

جمعة الوداع کو پوری دنیا میں قبلہ اول کی بازیابی، القدس کی آزادی اور فلسطینیوں کے ساتھ یکجہتی کے یوم القدس پر مسلمانوں کے جذبات کے اظہار پر اسرائیل نے مسجد اقصیٰ پر حملہ کردیا ۔پیر کو اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہاکہ فلسطین کی آزادی کے لیے پوری ملت اسلامیہ کو تاریخی کردار ادا کرنا ہوگا۔ اقوام متحدہ اسرائیلی مظالم اور جارحیت پر سخت ایکشن لے، امریکہ اسرائیل نوازی سے خود پوری دنیا میں اپنے لیے مزید رسوائی اور نفرتیں سمیٹ رہا ہے۔

لیاقت بلوچ نے کہاکہ کشمیربحران پوری دنیا کے ضمیر کے لیے بڑا چیلنج ہے ۔ مسئلہ کشمیر اقوام متحدہ اور بھارتی جارحانہ، غیر انسانی بربریت پر مبنی کردار پر گہرا سیاہ داغ ہے۔ مقبوضہ کشمیر میں انسانوں کے خلاف جرائم ناقابل بیان ہیں لیکن عالمی ادارے خاموش ، جانبدار اور بے حس ہیں ۔ پانچ اگست کے بعد سے بھارت نے ریاست جموں و کشمیر میں بدترین لاک ڈاﺅن مسلط کیاہے ۔ کرونا وبا کی تباہ کاریوں کے باوجود فاشسٹ مودی کشمیریوں کو کوئی ریلیف نہیں دے رہا۔ فاشسٹ باخبر رہیں کہ ظلم اور ناانصافی کے اقدامات کا حسا ب انہیں دینا ہوگا ۔ پاکستان کے بائیس کروڑ عوام کشمیریوں کے ساتھ ہیں۔

انہوں نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان کے دورہ سعودی عرب کے بعد مسئلہ کشمیر پر متضاد بیانات تشویش میں اضافہ کر رہے ہیں۔ وزیراعظم قومی قیادت کو دورہ سعودی عرب پر اعتماد میں لیں، پاکستان اور سعودی عرب کے تعلقات ہمیشہ مثالی رہنے چاہئیں لیکن بار بار تعلقات کار کی سرد مہری کا بھی مستقل حل تلاش کرنا چاہیے۔

لیاقت بلوچ سے لاپتہ افراد کے خاندانوں کے نمائندہ وفد نے ملاقات کی اور کئی سالوں سے لاپتہ اپنے پیاروں کی وجہ سے دکھ درد اور بے بسی کا اظہار کیا، لیاقت بلوچ نے کہا کہ حکومت لاپتہ افراد کی بازیابی کے لیے مستقل حکمت عملی اختیار کرے۔ سیکورٹی فورسز اور ریاستی اداروں کو طویل مدت سے جاری افراد کو لاپتہ کر دینے کی حکمت عملی تبدیل کرنا ہوگی، آئین اور قانون کے مطابق ریاست کے خلاف استعما ل ہونے والے افراد کو سزاد ی جائے ، لواحقین خصوصاً ماﺅں بہنوں کو زندہ در گور نہ کیا جائے۔