ایرانی سرگرمیوں کو لیکر امریکی و اسرائیلی حکام سر جوڑ کر بیٹھ گئے

335

امریکی وزیر خارجہ انتھونی بلنکن نے اسرائیلی جاسوسی ادارے موساد کے سربراہ اور امریکا میں اسرائیلی سفیر سے ملاقات کی۔

غیر ملکی خبررساں ادارے کے مطابق اس ملاقات سے واقف کار ایک شخص نے بتایا ہے کہ اس ملاقات میں اسرائیلی حکام نے ایران کی جوہری سرگرمیوں کے بارے میں “گہری تشویش” کا اظہار کیا ہے۔

ذرائع نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بات کرتے ہوئے رائٹرز کو بتایا کہ واشنگٹن میں ہونے والے اجلاس میں امریکی قومی سلامتی کے مشیر جیک سلیوان اور ان کے اسرائیلی ہم منصب کے مابین بھی بات چیت ہوئی جس میں اسرائیلی وفد نے ایران کے خلاف “خودمختاری سے کارروائی” کرنے پر زور دیا۔

چونکہ صدر جو بائیڈن نے ایران کے جوہری پروگرام پر قابو پانے کے لئے 2015 کے معاہدے میں ممکنہ طور پر امریکی واپسی کی تلاش شروع کی ہے جو ان کے پیش رو ڈونلڈ ٹرمپ نے ترک کردی تھی تاہم اسرائیل نے ایرانی ٹکنالوجیوں اور منصوبوں پر مزید پابندی عائد کرنے کی اپیل کی ہے۔