لاہور ،او پن مارکیٹ میں پرچوں کی سطح پر مہنائی کا طوفان تھم نہ سکا

68

لاہور( این این آئی )صوبائی دارالحکومت میں اوپن مارکیٹ میں پرچون سطح پر مہنگائی کا طوفان تھم نہ سکا ،حکومت اور انتظامیہ کے دعوئوں کے باوجود گراں فروشوں نے سرکاری نرخنامے کو کسی خاطر میں نہ لاتے ہوئے پھلوں اور سبزیوں کی من مانے نرخوں پر فروخت جاری رکھی، چینی کی سرکاری نرخوں پر خریداری خواب بن گئی۔ سبزیوں میں ایک کلو آلو نیا درجہ اول کی زیادہ سے زیادہ قیمت 45 روپے مقرر کی گئی لیکن دکانداروں نے 50 روپے تک فروخت کے، آلو نیا درجن دوم 39کے بجائے45روپے،آلو سفید28روپے کے بجائے35روپے،پیاز درجہ اول 26روپے کے بجائے38روپے،پیاز درجہ دوم 22کے بجائے30روپے،ٹماٹر درجہ اول30روپے کے بجائے45روپے، ٹماٹر درجہ دوم26روپے کے بجائے 35سے40 روپے،لہسن دیسی118روپے کے بجائے 190روپے،لہسن چائنہ155روپے کے بجائے 190،لہسن ہرنائی130روپے کے بجائے 150 روپے ، ادرک تھائی لینڈ اور ادرک چائنہ 310روپے کے بجائے375روپے، کھیرا دیسی52روپے کے بجائے 60 روپے،کھیرا فارمی27روپے کے بجائے 35 روپے ، کریلے 52روپے کے بجائے65روپے،پالک فارمی 19روپے کے بجائے 25روپے،میتھی 73روپے کے بجائے85روپے، بینگن50روپے کے بجائے60، بند گوبھی27روپے کے بجائے35روپے، پھول گوبھی 57 روپے کے بجائے85سے 90روپے،شملہ مرچ 42 روپے کے بجائے55روپے،سبز مرچ اول73روپے کے بجائے120روپے، گھیا کدو47روپے کے بجائے55روپے،گھیا توری73کے بجائے 80 روپے ، لیموں دیسی300روپے کے بجائے430روپے،لیموں چائنہ 170کے بجائے300روپے،بھنڈی 104 روپے کے بجائے115روپے، شلجم37کے بجائے 45 روپے ،اروی124کے بجائے132روپے، مٹر 109 روپے کے بجائے130روپے، مونگرے 114روپے کے بجائے130روپے،گاجر چائنہ27روپے کے بجائے35روپے فی کلو تک فروخت کی گئی ۔ پھلوں میں ایک کلو سیب کالا کولو پہاڑی180روپے کے بجائے250،سیب کالا کولو پہاڑی دوم 120روپے کے بجائے175روپے،سیب کالا کولو میدانی اول 120 روپے کے بجائے180،سیب ایرانی145روپے کے بجائے165روپے، سیب سفید اول115روپے کے بجائے145روپے،کیلا درجن اول 175روپے کے بجائے230روپے، کیلا درجن دوم105روپے کے بجائے 160 روپے، اسٹرابیری اول 135 روپے کے بجائے150روپے،اسٹابری دوم68روپے کے بجائے80سے 90، آڑواول180روپے کے بجائے 20 ، امرود اول 155روپے کے بجائے 170 روپے ، امرود دوم 93 کے بجائے110، کھجور اصیل اول160روپے کے بجائے210،کھجور ایرانی اول226روپے کے بجائے300روپے، خربوزہ65کے بجائے70روپے، کینو سپیشل درجن 205 روپے کے بجائے320روپے، کینودرجن اول 85 روپے کے بجائے175 روپے،لوکاٹ 120روپے کے بجائے135روپے ،گرما 125روپے کے بجائے 135روپے ، تربوز32روپے کے بجائے38 سے 40 اور فالسہ290روپے کے بجائے4ؓ0روپے فی کلو تک فروخت کیا گیا ۔دوسری جانب سے اوپن مارکیٹ میں چینی کی سرکاری نرخوں پر دستیابی خواب بن گئی ہے ، شہر کے مختلف مقامات پر دکاندار چینی 110سے120روپے فی کلو میں فروخت کر رہے ہیں۔ دوسری جانب رمضان بازار سے خریداری کرنے والے شہریوں نے آٹے کے معیار کو انتہائی ناقص قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ صوبائی وزراء اور بیورو کریٹس رمضان بازار سے ملنے والا آٹا خرید کر کھائیں تاکہ انہیں اس کے معیار کا اندازہ ہوسکے۔