ویکسین کا سب سے زیادہ شیئر سندھ کو دیا گیا، یاسمین راشد

162

لاہور: پنجاب کی وزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد نے کہا ہے کہ کورونا ویکسین کا سب سے بڑا اسٹاک سندھ کو دیا گیا تھا جبکہ بلاول بھٹو زرداری کی پریس کانفرنس سن کر افسوس ہوا۔

تفصیلات کے مطابق  لاہور میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے پنجاب کی وزیرِ صحت ڈاکٹر یاسمین راشد کا پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین کو ہدفِ تنقید بناتے ہوئےکہنا تھاکہ بلاول بھٹو زرداری کی پریس کانفرنس سن کر بہت افسوس ہوا جبکہ این سی او سی کی پہلی میٹنگ میں سب سے زیادہ شیئر سندھ کو دیا گیا تھا۔

انہوں نے چیئرمین پی پی پی سے مخاطب ہو کر کہا کہ بلاول صاحب، جو ویکسین سندھ کو دی گئی ابھی وہ ہی استعمال نہیں ہوئی، آپ کی حکومت خود مختار تھی، آپ ویکسین خرید سکتے تھے۔

یاسمین راشدکا کہناتھا کہ پنجاب میں 9 لاکھ 34 ہزار 170 افراد کو کورونا وائرس کی ویکسین لگائی جا چکی ہے جبکہ بھارت ویکسین فراہمی کا سب سے بڑا ملک ہے، لیکن وہ سب شہریوں کی ویکسین یشن نہیں کر پا رہا ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ لاہور میں مزید ویکسی نیشن سینٹر بنائے جا رہے ہیں جبکہ کورونا ویکسین کا سب سے زیاہ اسٹاک سندھ کو دیا گیا تھا،  بلاول صاحب جب تنقید کرتے ہیں تو دکھ ہوتا ہے، یہ کون سا وقت ہے کہ ہم ویکسین پر تنقید کریں۔

ڈاکٹر یاسمین راشد نے بتایا کہ پنجاب میں کورونا وائرس کے مثبت کیسز کی شرح 11 فیصد ہے، آج صوبے میں کورونا کے 3 ہزار 56 کیسز مثبت رپورٹ ہوئے ہیں۔

وزیرِ صحت پنجاب نے مزید کہا کہ پنجاب میں 200 وینٹی لیٹر بڑھائے گئے ہیں، اوسطاً 23 ہزار افراد کو یومیہ کورونا ویکسین لگائی جا رہی ہے۔

یاسمین راشدکا یہ بھی کہنا ہے کہ لاہور میں اگلے 2 دن میں کورونا وائرس کی ویکسی نیشن کے لیے اسپیشل بس روٹ چلا رہے ہیں۔

دوسری جانب وزیر صحت پنجاب کا  کہنا تھاکہ پنجاب میں آکسیجن فراہمی کی صورتحال اطمینان بخش ہے اور شیڈول آپریشن دو ہفتے کیلیے ملتوی کر دیئے ہیں جبکہ لاہور میں مثبت کیسز کی شرح 20 فیصد پر پہنچ گئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ سیکرٹری صنعت کو ہدایت کی ہے کہ فیکٹریوں کو آکسیجن کی سپلائی نسبتا کم کر دی جائے اور صوبے میں دو ہفتے کے دوران 200 وینٹی لیٹرز لگائے گئے ہیں، حفاظتی تدابیر پر عمل کر کے ہی وبا سے بچا جاسکتا ہے۔