نیند میں اکثر خلل عمر کو گھٹا بھی سکتا ہے

212

رات بھر نیند میں خلل پڑنا صبح کے وقت بدمزاج اور تھکاوٹ محسوس کرنے سے کہیں زیادہ نقصان دہ ہے۔

متاثرہ نیند درحقیقت دل کی بیماری یا کسی اور عارضے کا قبل از وقت سبب بن سکتی ہے اور عمر میں کمی کا باعث بھی۔ خواتین ان اثرات سے مردوں کے مقابلے میں زیادہ سخت متاثر ہوتی ہیں۔

امریکن اکیڈمی آف سلیپ میڈیسن کی ترجمان ڈاکٹر آندریا ماتسمورا نے کہا ، “اعداد و شمار ان تمام وجوہات کی نشاندہی کرتا ہے کہ لوگوں کو اس بات کی اسکریننگ کرنے کی ضرورت کیوں ہے کہ آیا وہ تازگی محسوس کرتے ہیں یا نہیں اور وہ ہر رات کتنی نیند لے رہے ہیں۔

رات کے وقت نیند میں خلل شور و غل ، درجہ حرارت ، درد یا نیند میں سانس لینے میں دشواری کے شبب پڑتا ہے۔ یہ دورانیہ مختصر ہوتا ہے اور آپ کو اکثر اس کا پتہ نہیں چلتا کہ جب تک کہ وہ اسباب اتنے شدید نہ ہوں کہ آپ کو مکمل طور پر جگا دے یا آپ کے ساتھ لیٹنے والا اس کو نوٹ کرے۔

تحقیق میں یہ بھی بتایا گیا کہ جن خواتین کو زیادہ وقت تک رات کو نیند میں خلل کا سامنا کرنا پڑتا ہے ان میں دل کی بیماری کا خطرہ لگ بھگ دوگنا ہوتا ہے اور ان تمام امور سے جلد موت کا امکان بھی زیادہ ہوتا ہے۔ جبکہ یہی حال بھرپور نیند نہ لینے والے مردوں میں 25 فیصد تک پایا گیا ہے۔