امن عالم کو بڑی طاقتوں سے خطرہ

142

جب بڑی طاقتیں معاہدوں پر عمل نہ کریں تو امن عالم کی ضمانت کیسے دی جاسکتی ہے۔ امریکا نے عالمی سطح پر کیے گئے معاہدوں کی خلاف ورزی سب سے زیادہ کی ہے۔ اس سلسلے میں اہم ترین مظہر ایران اور افغانستان سے کیے گئے معاہدے ہیں سابق امریکی صدر بارک اوباما نے 5 عالمی طاقتوں کے ساتھ ایران کے ساتھ جوہری معاہدہ کیا اور اس پر عاید پابندیوں کو اٹھانے کا عہد کیا لیکن بعد میں آنے والے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے یکطرفہ طور پر معاہدے سے نکلنے کا اعلان کردیا۔ کوئی عالمی طاقت امریکا کا ہاتھ نہیں روک سکی۔ موجودہ صدر جوبائیڈن کے پیش رو ڈونلڈ ٹرمپ نے افغانستان پر قبضے کے لیے طویل ترین جنگ سے نکلنے کا فیصلہ کیا اور افغانستان سے مکمل فوجی انخلا کا عہد کیا لیکن ٹرمپ کے کیے گئے معاہدے عمل سے جوبائیڈن گریز کررہے ہیں۔ افغانستان کی امارت اسلامیہ یعنی افغان طالبان سے معاہدے کی اتنی اہمیت تھی کہ صدارت تبدیل ہوجانے کے باوجود نومنتخب امریکی صدر جوبائیڈن نے افغانستان کے لیے امریکی صدر کے افغان نژاد نمائندے زلمے خلیل زاد کو برقرار رکھا جو افغان طالبان سے بات چیت میں مہارت حاصل کرچکے تھے۔ جوبائیڈن نے ٹرمپ کی روش پر چلتے ہوئے افغانستان سے مکمل فوجی انخلا کے عہد پر عمل کرنے سے انکار کردیا ہے۔ اس عمل نے افغانستان میں امن کی بحالی کو خطرے میں ڈال دیا ہے۔ امریکی مشورے پر اقوام متحدہ کے تحت ترکی میں افغانستان سے متعلق کانفرنس منعقد ہونے والی ہے لیکن امریکی روش کی وجہ سے افغان طالبان نے ترکی میں منعقد ہونے والی کانفرنس میں شرکت کرنے سے انکار کردیا ہے۔ اصل مسئلہ یہ ہے کہ اپنی تاریخ کی طویل ترین اور مہنگی جنگ ہارنے کے باوجود مستقبل کی افغان حکومت پر امریکا اپنی گرفتار برقرار رکھنا چاہتا ہے۔ یہ امریکی رویہ افغانستان میں امن کے قیام میں رکاوٹ بن گیا ہے۔ امریکی ذرائع ابلاغ نے خبر دی ہے کہ نائن الیون کی بیسویں برسی سے قبل جوبائیڈن افغانستان سے امریکی فوجوں کے انخلا کا اعلان کردیں گے یعنی عہد کی پابندی نہیں کریں گے جس کے مطابق مئی2021 تک مکمل فوجی انخلا ہوجانا ہے امریکی وزیر خارجہ نے ایک خط کے ذریعے مستقبل کی افغان حکومت کا نقشہ بھی پیش کیا ہے جوبائیڈن نئی شرائط عائد کررہے ہیں جس کی وجہ سے امن معاہدہ خطرے میں پڑ گیا ہے۔ گویا رسی جل گئی ہے پر بل نہیں گیا۔ اگر طاقتور ممالک ہی اپنے کیے ہوئے معاہدوں کی پاسداری نہیں کریں گے تو دنیا میں امن کیسے قائم ہوسکتا ہے۔