ماتم……………اقبال

66

 

آفتابِ تازہ پیدا بطنِ گیتی سے ہْوا
آسماں! ڈْوبے ہوئے تاروں کا ماتم کب تلک

توڑ ڈالیں فطرتِ انساں نے زنجیریں تمام
دْوریِ جنّت سے روتی چشمِ آدم کب تلک