غالب……………اقبال

37

فکرِ انساں پر تری ہستی سے یہ روشن ہْوا
ہے پرِ مرغِ تخیّل کی رسائی تا کجا

تھا سراپا روح تْو، بزمِ سخن پیکر ترا
زیبِ محفل بھی رہا، محفل سے پنہاں بھی رہا