سینیٹ میں سرپرائز نتائج دینگے، بلاول بھٹو

153

اسلام آباد: چیئرمین پاکستان پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری نے دعوی کیا ہے کہ اراکین پارلیمنٹ بھی حکومت کے ساتھ نہیں پی ڈی ایم کے ساتھ ہیں، انہوں نے کہا کہ پی ڈی ایم نے حکومت کو ہر میدان میں چیلنج کیا ہے،

پی ڈی ایم کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کے ساتھ ملاقات کے بعد میڈیا بریفنگ میں انہوں نے کہا کہ ضمنی انتخابات میں حکومت کو شکست دی کیونکہ عوام حکومت کے ساتھ نہیں ہیں بلکہ پی ڈی ایم کے ساتھ ہیں، موجودہ حکومت کو گھر بھیجنے میں کامیاب ہوں گے، حکومت کو خیبر پختونخوا سے پشین تک شکست دی ہے انہوں نے الزام عائد کیا کہ ضمنی انتخابات کے دوران دو حلقوں میں دھاندلی کی گئی۔

چیئرمین پیپلز پارٹی نے کہا کہ یوسف رضا گیلانی پی ڈی ایم کے متفقہ امیدار ہیں امید ہے کہ سینیٹ الیکشن میں ہمارے امیدوارسرپرائزنگ نتائج لائیں گے،بلاول بھٹو نے کہا کہ وفاقی حکومت نے کراچی کو لاوارث چھوڑ دیا ہے، انہوں نے مشورہ دیا کہ ایم کیو ایم کو چاہیے کہ پی ڈی ایم میں شامل ہو کر کراچی کے حقوق کے لیے آواز اٹھائے۔

پی ڈی ایم کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے اس موقع پر میڈیا سے بات چیت میں کہا کہ وہ بلاول بھٹو، سید یوسف رضا گیلانی اور فرحت اللہ بابر کی آمد پر ان کے شکر گزار ہیں پی ڈی ایم چاروں صوبوں میں سینیٹ انتخابات  میں متحد ہے،ملکی سیاست نے انگڑائیاں لینا شروع کر دی ہیں، حکومتی صفوں میں کھلبلی مچی ہوئی ہے، حکومت کاخیال تھا پی ڈی ایم سینیٹ الیکشن میں اختلافات کا شکار ہوگی لیکن چاروں صوبوں اور مرکز میں پی ڈی ایم کا اتحاد قوم کیلئے خوشخبری ہے، پی ڈی ایم عوام کی تنہا آواز ہے، پی ڈی ایم اصولی طورپرتحریک کانام ہے ہمیں سینیٹ الیکشن میں اچھے کی امیدہے اور حکومتوں صفوں میں مایوسی کاماحول ہے۔

مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ پی ڈی ایم مہنگائی کے خلاف آواز اٹھا رہی ہے، اسلام آباد میں ہمارے تین لوگوں کو شہید کیا گیا، ان کا کہنا تھا کہ حکومتی صفوں میں مایوسی ہے، سینیٹ الیکشن کے فوری بعد پی ڈی ایم کے سربراہی اجلاس ہوں گے، سینیٹ الیکشن میں اچھے نتائج آئیں گے،ان کا کہنا تھا کہ موجودہ حکمرانوں سے جان چھڑوانا عوام کی خدمت ہو گی، سینیٹ انتخابات کے بعد مستقبل کی حکمت عملی وضع کی جائے گی،مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ پی ڈی ایم انتخابی اتحاد نہیں بلکہ تحریک کا نام ہے، اخلاقی طور پرکوشش کرتے ہیں کہ انتخابات میں ایک دوسرے کے ووٹ نہ کاٹیں۔