یزداں

25

پستیِ فطرت نے سِکھلائی ہے یہ حْجتّ اسے
کہتا ہے ’تیری مشیّت میں نہ تھا میرا سجود

دے رہا ہے اپنی آزادی کو مجبوری کا نام
ظالم اپنے شْعلۂ سوزاں کو خود کہتا ہے دْود!۔