آصف علی زرداری نیب ریفرنس: کیس منتقلی پر فریقین کو نوٹسز جاری

110

اسلام آباد: سپریم کورٹ آف پاکستان نے سابق صدر اور پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری کے ریفرنس کی کراچی منتقلی سے متعلق کیس میں فریقین کو نوٹس جاری کر دیئے۔

تفصیلات کے مطابق سابق صدر اور پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری کے ریفرنس کی منتقلی سے متعلق کیس کی سپریم کورٹ میں سماعت ہوئی جبکہ عدالتِ عظمیٰ کے جج جسٹس عمر عطاء بندیال کی سربراہی میں 3 رکنی بنچ نے کیس کی سماعت کی۔

سپریم کورٹ نے ریمارکس دیئے کہ جائزہ لینا ہوگا کہ سپریم کورٹ نے کن حالات میں ریفرنس اسلام آباد میں دائر کرنے کا حکم دیا تھا جبکہ سپریم کورٹ کا 7 جنوری 2019ء کا فیصلہ حتمی ہے اور عدالتی فیصلے پر عمل روک سکتے ہیں، نہ ہی اسے تبدیل کر سکتے ہیں۔

سابق صدر کے وکیل فاروق ایچ نائیک نے عدالت کو بتایا کہ آصف زرداری کے خلاف 4 نیب ریفرنسز احتساب عدالت اسلام آباد میں زیرِ التواء ہیں جبکہ آصف زرداری کے خلاف مقدمات سپریم کورٹ کے حکم پر اسلام آباد منتقل ہوئے، چیئرمین نیب ملک بھر میں کسی بھی احتساب عدالت میں ریفرنس دائر کرنے کا صوابدیدی اختیار رکھتے ہیں۔

جسٹس عمر عطاء بندیال نے کہا کہ اگر چیئرمین نیب کے پاس اختیار ہے تو سپریم کورٹ بھی ریفرنس منتقلی کا اختیار رکھتی ہے اور آپ کس بنیاد پر ریفرنس منتقلی چاہتے ہیں؟ جبکہ سپریم کورٹ کا اس ریفرنس پر فیصلہ وجوہات کی تشریح پر منحصر ہے۔

فاروق ایچ نائیک کا کہناتھا کہ نیب قانون کے تحت مقدمہ منتقلی کی درخواست دینا قانونی حق ہے اور عدالتی حکم سے قانونی حق ختم نہیں کیا جا سکتا جبکہ جسٹس عمر عطاء بندیال کا کہناتھا کہ فیصلے میں بہت سے الزامات کا ذکر ہے جس کی وجہ سے کیس اسلام آباد میں دائر ہوئے ہیں ،  جس پر  فاروق ایچ نائیک نے استدعا کی کہ نیب سے پوچھ لیں کہ کیا وہ الزامات اب بھی برقرار ہیں؟

دوسری جانب فاروق ایچ نائیک نے عدالت کو بتایا کہ آصف زرداری ماضی میں تمام مقدمات سے بری ہوئے اور گزشتہ ریفرنسز میں بھی ایک کیس کراچی منتقل ہوا تھا، جس پر  سپریم کورٹ نے کہا کہ کیس کے تمام فریقین اور گواہان کراچی سے تعلق رکھتے ہیں اور ریفرنس کی منتقلی کی وجوہات دیکھ کر اس پر فیصلہ کریں گے۔

فاروق ایچ نائیک کا کہناتھا کہ استدعا ہے کہ کیس کے دیگر فریقین کو نوٹسز جاری کریں، جس پر  جسٹس عمر عطاء بندیال نے سوال کیا کہ آپ عدالت میں میلہ لگانا چاہتے ہیں؟ 50 لوگ آ جائیں گے تو عدالت کا وقت ضائع ہوگا اور رش الگ لگ جائے گا۔

واضح رہے  سپریم کورٹ آف پاکستان نے چیئرمین نیب اور دیگر فریقین کو نوٹس جاری کر دیئے ہیں  جبکہ عدالت کی جانب سے فریال تالپر سمیت تمام ملزمان کو بھی نوٹس جاری کیے گئے ہیں ۔

عدالتِ عظمیٰ نے ریمارکس دیتے ہوئےکہا کہ چیئرمین نیب موجودہ کیس میں عدالت کی معاونت کریں اور کیس کی سماعت 1 ماہ کے لیے ملتوی کردی گئی ہے۔