افغانستان میں فائرنگ سے عدالت عظمیٰ کی2خواتین جج ہلاک

102

کابل( آن لائن )افغانستان کے دارالحکومت کابل میں مسلح افراد کی فائرنگ سے عدالت عظمیٰ کی 2خواتین جج ہلاک ہوگئیں۔ رپورٹ میں عدالت کے ترجمان احمد فہیم قویم کے حوالے سے بتایا کہ ججز پر اس وقت حملہ کیا گیا جب وہ عدالت کی گاڑی میں اپنے دفتر آرہی تھیں انہوں نے کہا کہ بدقسمتی سے حملے کے نتیجے میں ہم اپنی 2 خواتین ججز سے محروم ہوگئے جبکہ واقعے میں ڈرائیور زخمی ہوا ۔ترجمان نے بتایا کہ گاڑی خواتین ججز کو ان کے دفتر تک پہنچانے کا کام کرتی ہے ملک کی اعلیٰ عدلیہ کے لیے 200 سے زائد خواتین ججز کام کرتی ہیں ۔دوسری جانب کابل پولیس نے بھی مذکورہ حملے کی تصدیق کی۔اٹارنی جنرل کے دفتر کے ترجمان جمشید رسولی کا کہنا تھا کہ یہ عدالت عظمیٰ کے لیے کام کرنے والی ججز تھیں واضح رہے کہ حالیہ مہینوں میں افغانستان خاص طور پر کابل میں پرتشدد واقعات میں اضافہ ہوا ہے اور اعلیٰ شخصیات کی ٹارگٹ کلنگ کے نئے رجحان سے شہر میں خوف اور انتشار پھیل رہا ہے ۔حالیہ حملہ پینٹاگون کے اس اعلان کے 2 روز بعد سامنے آیا جس میں اس نے افغانستان میں فوجیوں کی تعداد کو اڑھائی ہزار تک کرنے کا اعلان کیا تھا جو تقریباً 2 دہائی سے جاری جنگ کے دوران اہلکاروں کی سب سے کم تعداد ہے۔