امارات میں شراب و منشیات کی عادی خواتین میں خاطر خواہ اضافہ

481

دبئی پولیس کے ایک اعلی عہدیدار نے ملک میں معاشرتی تبدیلیوں کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ متحدہ عرب امارات میں شراب اور منشیات کی عادی خواتین کی تعداد میں اضافہ ہورہا ہے۔

غیر ملکی خبررساں ادارے کی ایک رپورٹ کے مطابق دبئی پولیس کے ہیمایا انٹرنیشنل سینٹر کے منیجر کرنل عبد اللہ متار الخوات نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ زیادہ تر معاملات کا تعلق ایسی لڑکیوں سے ہے جو والدین کی نگرانی کے بغیر اپنے دوستوں کے ساتھ شراب نوشی اور منشیات لیتی ہیں۔

کرنل الخوات نے وضاحت کی کہ انٹرنیٹ کے تیزی سے پھیلاؤ کے ساتھ ہی شراب اور منشیات کی اب آن لائن فروخت ہوتی ہیں۔ دریں اثنا دبئی میں ایراڈا سنٹر کی کمیونٹی ریسرچ ، آگہی اور عوامی تعلقات کے ڈائریکٹر عبد اللہ الانصاری نے بتایا کہ ایک شرابی لڑکی جس کا علاج مرکز میں ہوا تھا، نے بتایا کہ وہ آن لائن شراب کی خریداری کرتی تھی۔

انہوں نے بتایا کہ منشیات فروش اور اسمگلر عام طور پر 18 سے 35 سال کی لڑکیوں کو نشانہ بناتے ہیں جبکہ دوسری جانب امارات میں نشے کے عادی متعدد افراد اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں۔

واضح رہے متحدہ عرب امارات میں مسلمانوں کو شراب خریدنے کی اجازت نہیں تھی تاہم اسرائیل سے سفارتی تعلقات قائم ہونے کے بعد متحدہ عرب امارات نے عوام کو شراب کی سرکاری اجازت دے دی تھی جس کے تحت غیر مسلموں کے علاوہ مسلمان بھی اب بغیر لائسنس کے شراب خرید سکتے ہیں۔